جنتی جوانوں کے سردار…

294

روز ازل سے ہی اللہ تبارک و تعالیٰ کا ضابطہ رہا ہے کہ محبوبان الٰہی کو امتحان اور آزمائش کی سخت ترین منزلوں سے گزرنا پڑتا ہے اور جاں نثاری، تسلیم و رضا کا مظاہرہ کرنا پڑتا ہے۔ پھر کبھی اپنی قربانی دینے والے کو ذبیح اللہ کا لقب ملتا ہے تو کبھی باطل کے سامنے کلمہ حق بلند کرتے ہوئے شہادت کے عظیم رتبے پر فائز ہونے والے کو جنتی نوجوانوں کی سرداری ملتی ہے۔

حضرت امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی شہادت نے ہمارے ضمیروں کو بیدار کیا، دلوں کو بدلا، ذہنی انقلاب کی راہیں ہموار کیں اور انسانی اقدار کی اہمیت کو متعارف کروایا ہے۔ حضرت حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی ولادت ہوئی تو اس خوشخبری کو سن کر آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم تشریف لائے، حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کو گود میں لیا، داہنے کان میں اذان اور بائیں میں اقامت کہی اور اپنی زبان منہ میں دی، پیغمبر علیہ السلام کا مقدس لعاب دہن امام حسین رضی اللہ تعالیٰ کی غذا بنا، ساتویں دن عقیقہ کیا گیا۔ آپ کی پیدائش سے خاندان میں انتہائی خوشی اور مسرت محسوس کی جاتی تھی۔ خاتم النبیین حضرت محمد صلی اللہ علیہ والہ وسلم اپنے دونوں نواسوں کیساتھ انتہائی محبت فرماتے، کبھی سینہ پر بٹھاتے ، کبھی کاندھوں پر چڑھاتے، نماز میں سجدہ کی حالت میں امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ پشت مبارک پر چڑھ جاتے تو سجدہ طویل کردیتے یہاں تک کہ بچہ خود سے پشت پر سے علیحدہ ہو جاتا۔

جب امام حسین رضی اللہ تعالیٰ مسجد کے دروازے سے داخل ہوتے ہوئے زمین پر گر گئے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے خطبہ پڑھتے ہوئے اپنا خطبہ قطع کردیا، منبر سے اتر کر بچے کو زمین سے اٹھایا اور پھر منبر پر تشریف لائے اور مسلمانوں کو تاکید فرماتے ہوئے کہا، دیکھو یہ حسینؓ ہے، اسے خوب پہچان لو اور ان سے محبت رکھو۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا ” حسینؓ مجھ سے اور میں حسینؓ سے ہوں، جو شخص حضرت حسینؓ سے محبت کرے اللہ تعالیٰ اس کے ساتھ محبت فرمائے گا“۔

حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم سے عرض کیا کہ اہل بیتؓ میں سے آپ کو سب سے زیادہ محبوب کون ہے ؟ تو آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا حضرت حسن رضی اللہ عنہ اور حضرت حسین رضی اللہ عنہ۔ آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہ سے کہا کرتے تھے میرے بیٹوں کو میرے پاس لے آو، اور آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم دونوں نواسوں کو سینے سے لگا لیتے۔

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے حضرت حسن ابن علی رضی اللہ عنہ کو کندھے پر اٹھایا ہوا تھا کہ ایک شخص نے کہا ”کیا ہی اچھی سواری ہے، جس پر آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ” سوار کتنا اچھا ہے“۔

مگر جب آنے والے حالات کا آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم کو علم ہوا تو آپ کی آنکھوں سے آنسو برس پڑے، آپ صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے فرمایا، میرے پاس جبرائیلؑ امین آئے اور مجھے بتایا کہ میری امت میرے اس بیٹے کو قتل کر دے گی، جبرائیلؑ اس جگہ کی سرخ مٹی بھی میرے پاس لائے جہاں اسے قتل کیا جائے گا۔ اور پھر جب اسلامی خلافت کے بعد بادشاہت کا دور آیا تو حضرت سیدنا امیر معاویہؓ کے بیٹے نے اپنے عظیم والد گرامی کے مشن سے باغی ہو کر اسلامی حکومت کو قیصر وکسریٰ کی طرز پر ملوکیت سے بدلنا چاہا اور اس پر امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے بیعت چاہی، یہی وہ موڑ ہے جو تاریخ اسلامی میں واقعہ کربلا کا سبب بنا۔

دراصل یزید اسلامی نظام شریعت کے روشن چہرے کو شہنشاہی کے زعم میں مسخ کرنا چاہتا تھا۔ جس دین کی اکملیت فخر موجدات صلی اللہ تعالیٰ علیہ والہ وسلم کی آمد کے ساتھ ہو گئی تھی۔ اسی دین کے اصول حرام و حلال میں یزید اپنی نفسانی خواہشات کے فیصلے نافذ کرنا چاہتا تھا۔ اس کے سامنے دو نمونے تھے، اسلامی نظام حکومت کا نمونہ اور کسریٰ کے استبداد کا نمونہ۔ اس نے اسلامی نظام حکومت کا نمونہ نہیں اپنایا بلکہ اس نے کسریٰ کی آمریت کو نمونہ عمل بنایا۔ اسی کی تصدیق کیلئے اس نے نواسہ رسول حضرت حسین رضی اللہ عنہ کو مجبور کرنا چاہا، وہ چاہتا تھا کہ شراب و شباب کی اجازت دیدی جائے، زنا و سود کی اجازت دیدی جائے، اسلامی تعزیرات میں رد و ترمیم کر دی جائے، شریعت کو طبیعت کے مطابق ڈھال لیا جائے اور ان سب کے باوجود امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ بیعت یزید کرکے یزیدی قوانین کو تسلیم کر لیں۔ معاملہ چونکہ اسلامی قوانین کی حفاظت کا تھا، یزید شریعت اسلامی میں اپنی مرضی کی تبدیلی چاہتا تھا، امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کا بیعت کر لینا مثال بن جاتا، یزیدی فتنے پر مہر تصدیق ثبت کرنے کا ذریعہ بن جاتا، اسلام کا وہ روشن چہرہ باقی نہ رہتا جس کیلئے خاتم الانبیاء محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ والہ وسلم اس دنیا میں تشریف لائے تھے۔

امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے مستقبل کیلئے ایک مثال قائم کر دی کہ یزید کی بیعت دراصل باطل کی توثیق ہے، اس لئے آپ نے بیعت یزید سے صاف انکار کرکے دنیا کو صدق و وفا کا وہ عظیم درس دیدیا کہ ہر باطل کے مقابل حضرت حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ حق کی علامت بن چکے ہیں۔ باطل چاہے اسلامی کلمے کے ساتھ آئے یا صیہونیت کی شکل میں، ایک مسلمان کیلئے سچے اسلامی احکام ہی کافی ہیں، انہی کی پیروی میں اس کیلئے نجات ہے۔ اس دنیائے فانی میں اپنے مکرو فریب اور جبروتشدد سے حاصل کی ہوئی قوت کے بل بوتے پر کسی کا بظاہر کامیاب نظر آنا اور اقتدار حاصل کرلینا، اصل کامیابی نہیں۔ بلکہ حقیقی اوردائمی کامیابی یہ ہے کہ انسان کو تخت ملے یا تختہ، وہ دنیاوی جاہ وحشمت کے لئے اللہ تعالیٰ اوراس کے رسول صلی اللہ علیہ والہ وسلم کی اطاعت کا دامن ہرگز نہ چھوڑے۔

حضرت امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ اکثر فرمایا کرتے تھے کہ” بادشاہوں کی بدترین صفات یہ ہیں کہ دشمنوں سے ڈریں، بے سہارا اور ناداروں پر رحم نہ کریں اور عطا و بخشش کے وقت بخل سے کام لیں“۔ حضرت حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ کی عظیم شہادت ہمیں یہ درس دیتی ہے کہ باطل کو ترک کرکے حق پر ڈٹا جائے۔ ہمیشہ دین حق کا علم بلند کیا جائے، چاہے اس کے لئے بڑی سے بڑی قربانی کیوں نہ دینی پڑے۔ اپنی اور اپنے عزیزوں کی جان راہ خدا میں نچھاور کرکے امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے بتا دیا کہ جب بھی اسلام کے مقابل یزیدیت سر ابھارے، میری شہادت سے درس لے کر استقلال کی تاریخ رقم کر لینا، باطل کے آگے سرنگوں نہ ہونا۔ جان دیدینا مگریزیدیت کی اطاعت قبول مت کرنا۔ تاریخ انسانی میں ایسے خونی سانحہ کی مثال نہیں ملتی، جان دینا آسان نہیں، عزیزوں کو قربان کرنا بڑا مشکل کام ہے ۔ یہ سب صرف اللہ تعالیٰ کی خوشنودی اور دین حق کی سربلندی کیلئے امام حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے قبول کیا اور امت محمدیہ (ص) کو بتا دیا کہ خودداری یہ نہیں کہ اسلام سے جدا راہ قبول کر لی جائے، خودداری تو یہ ہے کہ راہ حق پر چلا جائے چاہے اس کیلئے اپنے لہو سے ہی چمن کی آبیاری کرنی پڑے۔ حضرت حسین رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اپنے لہو سے ایک درخشاں تاریخ لکھ دی ہے جس کی سرخی آج بھی ہویدا ہے۔ بقول شاعر:

اک پل کی تھی بس حکومت یزید کی
صدیاں حسینؓ کی ہیں زمانہ حسینؓ کا

نوٹ: ادارے کا قلمکار کے خیالات اور پیش کردہ مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں

رانا اعجاز سیاسی و سماجی موضوعات پر لکھنا پسند کرتے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

تبصرے بند ہیں.