سولہ دسمبر۔ اکہتر

867

یہ ان دنوں کی بات ہے جب اکتوبر 1954میں گورنر جنرل غلام محمد نے دستور ساز اسمبلی توڑ دی تھی اور اس اقدام کو دستور ساز اسمبلی کے اسپیکر مولوی تمیز الدین خان نے سند ھ چیف کورٹ میں للکارہ تھا۔ اس دوران جب چیف جسٹس کانسٹنٹائین کی عدالت میں مولوی تمیزالدین خان کا مقدمہ چل رہا تھا ۔ ہم چند صحافی ، میں، ڈان کے رپورٹر مشیر حسن، اے پی پی کے مظفر احمد منصوری اور جنگ کے اطہر علی چیف کورٹ کی کینٹین میں چائے پی رہے تھے۔ اتنے میں سابق وزیر تجارت فضل الرحمان جن کا تعلق مشرقی پاکستان سے تھا قریب سے گذرے ۔ہم نے ان کو اپنی میز پر بلایا اور سیدھا سوال کیا کہ اب کیا ہوگا؟ فضل الرحمان صاحب نے ایک لمحہ کے توقف کے بغیر جواب دیا ‘ اب پاکستان ٹوٹ جائے گا’۔ ہم سب ان کے اس جوا ب پر اچھل پڑے۔ ہم نے ان سے پوچھا کہ کس بناء پر وہ یہ کہہ رہے ہیں؟ فضل الرحمان صاحب نے بلا کسی جھجک کے کہا کہ دستور ساز اسمبلی کی برطرفی کے پیچھے فوج کا ہاتھ ہے اور اب بہت جلد فوج ملک کے اقتدار پر قبضہ کر لے گی ۔ فوج چونکہ مغربی پاکستان کی ہے اس لئے مشرقی پاکستان کے عوام کے ذہنوں سے یہ حقیقت نہیں مٹائی جاسکے گی کہ مغربی پاکستان ان پر حکمرانی کر رہا ہے اور یہ بات مشرقی پاکستان کے عوام کے لئے ہرگز قابل قبول نہیں ہوگی وہ اس کے خلاف اٹھ کھڑے ہوں گے اور بالآخر پاکستان ٹوٹ جائے گا۔ ہم سب کا دل دھک سے رہ گیا اور ہم میں سے کوئی بھی فضل الرحمان صاحب کو نہیں للکار سکا۔

اس دن کے بعد اٹھارہ سال بھی نہیں گذرے ہوں گے کہ پاکستان دو لخت ہوگیا۔ دوش آپ کتنا ہی ہندوستان کو دیں لیکن اس زمانہ میں یہ سب کو نظر آرہا تھا کہ مشرقی پاکستان سے سرحد پار کر کے مغربی بنگال جانے والے لا کھوں پناہ گزینوں کی آڑ میں مکتی باہنی کے تربیتی مراکز قائم کئے گئے ہیں ۔ لیکن نہ جانے پاکستان کے فوجی حکمران یحی خان کی کیا مصلحت حائل تھی کہ اس کے نتائج کے مداوے کے لئے کوئی راہ تلاش نہیں کی گئی اور نہ مشرقی پاکستان میں علیحدگی پسند ی کے طوفان کے سدباب کے لئے کوئی سیاسی اقدام کیا گیا۔

ان دنوں اقوام متحدہ کے کمشنر برائے پناہ گزیناں پرنس صدر الدین آغا خان سے میری لندن میں ملاقات ہوئی تھی ۔انہوں نے پناہ گزینوں کی رضا کارانہ واپسی کا جامع منصوبہ پیش کیا تھاجس کا ایک مقصد مشرقی پاکستان کے بحران کے لئے مصالحت کی راہ ہموار کرنا تھا۔اس وقت پرنس صدر الدین سخت دل برداشتہ تھے کہ پاکستان کی حکومت نے اس منصوبہ کی طرف کوئی خاص توجہ نہیں دی اور نتیجہ کہ ہندوستان نے اس منصوبہ کوآسانی سے سبوتاژ کر دیا ۔ ایسا معلوم ہوتا تھا کہ مشرقی پاکستان سے گلو خلاصی کے لئے راہ ہموار کی جارہی ہے۔ اس بحران کے تصفیہ کے لئے سویت یونین کے طرف سے مصالحتی کوششوں کی جو پیشکش کی جارہی تھی وہ بھی ٹھکرائی جارہی تھی۔

ابھی تک میرے ذہن میں لندن میں اس زمانہ کے پاکستان کے منصوبہ بندی کمیشن کے ڈپٹی چیرمین ایم ایم احمد صاحب کی پریس کانفرنس کی یاد نقش سنگ کی مانند تازہ ہے ۔ 1970 کے اوائل میں ایم ایم احمد صاحب پاکستان کے امدادی کنسورٹیم کے اجلاس میں شرکت کے لئے پیرس جانے سے پہلے لندن آئے تھے اور انہوں نے پاکستان ہائی کمیشن میں پاکستانی صحافیوں کے لئے ایک پریس کانفرنس کی تھی۔ اس پریس کانفرنس میں وہ اپنے دو قریبی معتمد وں سر تاج عزیر اور ماجد علی صاحب کے جلو میں بیٹھے تھے۔ پاکستان کی معیشت کے بارے میں بات ہورہی تھی ۔ اچانک ایم ایم احمد صاحب نے یہ کہہ کر سب صحافیوں کو اچھنبے میں ڈال دیا کہ مشرقی پاکستان ، ملک کے لئے ذمہ داری کا بوجھ Liability)) بن گیا ہے اور اگر پاکستان کو اس سے نجات مل جائے تو پانچ سال کے اندر اندر پاکستان اسکینڈے نیویا کے ملکوں کے برابر آجائے گا۔ میں نے اور میرے ساتھیوں نے سخت احتجاج کیا کہ ایم ایم احمد صاحب آپ یہ کیا کہہ رہے ہیں ؟ ملک کے عوام کی اکثریت والے مشرقی پاکستان کو آپ Liability کہہ رہے ہیں جب کہ مشرقی پاکستان کے پٹ سن نے قیام پاکستان کے بعد ملک کی معیشت کو سہارہ دیا تھا۔ پھر آپ قیام پاکستان کی جدوجہد میں مشرقی پاکستان کی کاوشوں کو یکسر فراموش کر رہے ہیں۔ ایم ایم احمد صاحب کو فورا ًاحساس ہوا کہ انہوں نے غلط بات کہہ دی ہے لہذا وہ اس کی تاویلیں پیش کرتے رہے۔ لیکن مجھے اور میرے چند صحافیوں کے دل میں یہ پھانس اٹک گئی تھی کہ پاکستان میں ایسے عناصر ہیں جو اپنے مفادات کی خاطر مشرقی پاکستان سے جان چھڑانا چاہتے ہیں۔

پھر 16دسمبر۷۱ کو جب ڈھاکہ کے ریس کورس میدان میں جنرل نیازی نے جنرل جگ جیت سنگھ ارورا کے ساتھ بیٹھ کر شکست نامہ پر دستخط کئے تواس وقت لندن میں پاکستانیوں کو دھاڑیں مار مار کر روتے دیکھ کر مجھے 1954میں فضل الرحمان صاحب کی پیش گوئی اور 1970میں ایم ایم احمد کی پریس کانفرنس بے حد یاد آئی۔

مجھے 1973میں ذوالفقار علی بھٹوسے لندن میں آخری ملاقات یاد آرہی ہے جب وہ برطانیہ کے سرکاری دورے پرآئے تھے۔ بھٹو صاحب سے میری اس زمانہ سے ملاقات تھی جب ابھی وہ سیاست میں نہیں آئے تھے اور برکلے یونیورسٹی سے فارغ ہو کر انہوں نے کراچی میں مشہور وکیل رام چندانی ڈنگو مل کے چیمبر سے منسلک ہو کر وکالت شروع کی تھی۔ لندن کی یہ خاصی طویل ملاقات تھی ۔ شرط ان کی یہ تھی کہ اس کے بارے میں ان کے جیتے جی ایک لفظ بھی باہر نہیں آئے گا ۔ وہ نہ جانے کیوں ماضی کی یادوں کو بار بار کرید رہے تھے۔ مجھے بھٹو صاحب کے جاگیردارانہ انداز کا بخوبی احساس تھا کہ وہ اپنی کوئی مخالفت اور نکتہ چینی برداشت کرنے کے عادی نہیں تھے۔ مجھے ا س رات ان کے نہایت سہل موڈ سے ہمت ہوئی لہذا میں نےدوسرے امور پر بے تکلف اور کڑے سوالات کے آخر میں یہ پوچھا کہ انہوں نے 71کی جنگ میں فوج کی شکست پر فوجی حکمران یحی خان کے خلاف مقدمہ کیوں نہیں چلایا۔ تھوڑی دیر مجھے گھورنے کے بعد انہوں نے کہا سچ بات یہ ہے کہ مجھ سے امریکیوں نے صاف کہہ دیا تھا کہ میں یحی خان کو ہاتھ نہ لگاؤں کیونکہ انہوں نے چین سے تعلقات کی استواری میں اہم رول ادا کیا ہے اور امریکی ان کا احسان مانتے ہیں۔ میں اس جواب پر ہکا بکا رہ گیا کہ ایک آزد اور خودمختار ملک کا صدر امریکا کے سامنے اس قدر بے بس ہے۔ واپسی پر میں سوچتا آیا کہ در اصل خود بھٹو صاحب بھی ہر گز یہ نہیں چاہتے تھے کہ یحی خان کے خلاف غداری کا مقدمہ چلے کیونکہ بھٹو صاحب خود بھی اس مقدمہ میں ان کے رول کے بارے میں جواب طلبی سے نہ بچ سکیں گے۔ یہی وجہ ہے کہ ۷۱ کی جنگ کے بارے میں حمود الرحمان کمیشن کی رپورٹ کو انہوں نے جیتے جی ہوا نہیں لگنے دی تھی۔

آصف جیلانی لندن میں مقیم پاکستانی صحافی ہیں۔ انہوں نے اپنے صحافتی کرئیر کا آغاز امروز کراچی سے کیا۔ 1959ء سے 1965ء تک دہلی میں روزنامہ جنگ کے نمائندہ رہے۔ 1965ء کی پاک بھارت جنگ کے دوران انہیں دہلی کی تہاڑ جیل میں قید بھی کیا گیا۔ 1973ء سے 1983ء تک یہ روزنامہ جنگ لندن کے ایڈیٹر رہے۔ اس کے بعد بی بی سی اردو سے منسلک ہو گئے اور 2010ء تک وہاں بطور پروڈیوسر اپنے فرائض انجام دیتے رہے۔ اب یہ ریٹائرمنٹ کے بعد کالم نگاری کر رہے ہیں۔
آصف جیلانی کو International WhosWho میں یوکے میں اردو صحافت کا رہبر اول قرار دیا گیا ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

تبصرے بند ہیں.