عمران خان کا برطانوی پارلیمنٹ سے تاریخی خطاب

6,129

تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان برطانیہ کی پارلیمنٹ سے تاریخی خطاب کرنے کے بعد بحفاظت وطن واپس پہنچ گئے ہیں۔ کچھ دن سے تحریک انصاف کے سوشل میڈیا حمایتیوں کی جانب سے زوروشور سے یہ بات کی جا رہی تھی کہ پاکستان کی تاریخ میں عمران خان لیاقت علی خان کے بعد وہ دوسرے پاکستانی ہیں جنہیں برطانوی پارلیمنٹ سے خطاب کرنے کی “سعادت” نصیب ہو رہی ہے۔ غالب کا ایک شعر ہے: تھی خبر گرم کہ غالب کے اڑیں گے پرزے ۔ دیکھنے ہم بھی گئے تھے، پہ تماشہ نہ ہوا”۔ یہی حال عمران خان کے برطانیہ کی پارلیمنٹ سے کیے جانے والے خطاب کا ہوا۔

دو دن قبل جب ہم دفتر سے گھر لوٹے تو ہماری اہلیہ نے ہم سے قدرے حیرت سے دریافت کیا کہ کیا عمران خان برطانوی پارلیمنٹ سے خطاب کریں گے؟ ہمارے لیے بھی یہ نہایت حیران کن مگر خوش گوار خبر تھی۔ ہم نے اپنے ایک دوست سے دریافت کیا جو سوشل میڈیا پر تحریک انصاف کے پرجوش حمایتی ہیں مگر میدان عمل میں اتنے ہی متحرک ہیں جتنے کہ آج کل جہانگیر ترین پارلیمانی سیاست میں۔ انہوں نے ہمیں کہیں اور سے معلوم کر کے اطلاع دینے کا کہا اور غائب ہو گئے۔ کچھ دیر کے بعد انہوں نے اپنی فیس بک وال پر ایک اسٹیٹس شیئر کیا جس میں نواز شریف اور عمران خان کا تقابل کرتے ہوئے قوم کو یہ بتایا گیا تھا کہ پاکستان سے دو نوجوان سیاست دان برطانیہ پہنچے ہیں جن میں سے ایک چوری کے فلیٹس میں قیام کرے گا جبکہ دوسرا برطانیہ کی پارلیمنٹ سے خطاب کرے گا۔ آپس کی بات ہے، ہمیں دونوں باتوں پر ہنسی آ گئی۔ پھر ہم نے اپنی اہلیہ کو آگاہ کیا کہ یہ صورت حال ہے مگر یقین سے کچھ نہیں کہا جا سکتا۔ ہو سکتا ہے عمران خان واقعی ایسا کر گذریں۔

اس کے بات فیس بک اور ٹوئٹر پر پے در پے تحریک انصاف کے جاں نثاران کی جانب سے عمران خان کے برطانوی پارلیمنٹ سے تاریخی خطاب کے بارے میں معلومات قوم کو مہیا کی جانے لگیں۔ محسوس یہ ہو رہا تھا کہ برطانیہ کی پارلیمنٹ عمران خان کے افکار عالیہ سے بہرہ مند ہونے کو بے تاب ہے اور اگر عمران خان نے برطانوی دارالامرا کو مستفیض نہ کیا تو گویا ان کا جمہوری نظام خطرے میں پڑ جائے گا۔ یقین مانیئے کہ کچھ دیر کو ہمیں بھی یقین محکم ہو گیا کہ عمران خان یہ عمل پیہم کرتے ہوئے اپنی فاتح عالم محبت سے برطانوی پارلیمینٹیرینز کو جیت لیں گے۔ سونے پہ سہاگہ ہمارے دفتری ساتھی جو کہ دل وجان سے نواز شریف کے حمایتی ہیں، نے ہمیں بڑے پرجوش انداز میں بتایا کہ عمران خان برطانوی پارلیمنٹ سے خطاب فرمائیں گے اور ان کے خطاب کی راہ ان کی سابقہ اہلیہ کے موجودہ بھائی زیک گولڈاسمتھ نے ہموار کی ہے۔

جب نواز شریف کا کوئی حمایتی عمران خان کے بارے میں نسبتاً خیر کے کلمات ادا کرے تو سمجھ جانا چاہیئے کہ دال میں ضرور کچھ کالا ہے۔ جیسے ایک سوکن دوسری سوکن کا بھلا نہیں دیکھ سکتی بالکل ویسے ہی پاکستان میں سیاسی جماعتوں کے حمایتی اپنی مخالف جماعتوں کے راہنماؤں کی عزت و احترام نہیں کر سکتے۔ سوشل میڈیا پر ہر وقت ایک جنگ چھڑی ہوتی ہے جس میں نامناسب القابات سے لے کر کردار کشی تک سب کچھ دھڑلے سے کیا جا رہا ہوتا ہے اور اس پر فخر کا اظہار بھی جاری ہوتا ہے۔

چناچہ جب ان صاحب نے یہ اطلاع دی تو ہمیں آدھا یقین ہو گیا کہ برطانوی پارلیمنٹ ممکنہ طور پر کسی ایسی جگہ اکٹھی ہو رہی ہے جہاں میڈیا کی دسترس نہ ہو۔ اور پھر ایسا ہی ہوا۔ عمران خان واپس پاکستان تشریف لے بھی آئے لیکن برطانوی پارلیمنٹ اب تک اکٹھی نہیں ہو سکی البتہ کوئی آٹھ دس پارلیمینٹیرینز ایک ایسے ہال میں عمران خان کے ساتھ بیٹھے ضرور دکھائی دیئے جو غالباً برطانیہ کی پارلیمنٹ کا ہال نہیں تھا۔

تحریک انصاف کے آفیشل اکاؤنٹ سے جاری کردہ باتصویر اعلان کے مطابق عمران خان نے برطانیہ کے اراکین پارلیمنٹ سے تاریخی خطاب کیا ہے۔ اور اس کے بعد وہ تمام صاحبان نہ تو میرا فون اٹھا رہے ہیں اور نہ ہی میرے میسیج کا جواب دے رہے ہیں جنہوں نے مجھے حتمی طور پر یہ اطلاع دی تھی کہ عمران خان برطانیہ کی پارلیمنٹ سے خطاب کرنے والے دوسرے پاکستانی بننے جا رہے ہیں۔

 

اویس احمد اسلام آباد میں رہتے ہیں اور ایک نجی بنک کے ساتھ منسلک ہیں۔ یہ پانچ سال کی عمر سے کتاب بینی کر رہے ہیں۔ پڑھنے کے علاوہ لکھنے کا بھی شوق رکھتے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

5 تبصرے

  1. Kashif کہتے ہیں

    I was surprised to see this Photo as well. It was not an address to the parliament. At best you can call it a mini conference or realistically a face to face meeting.

    1. Awais Ahmad کہتے ہیں

      Exactly.

  2. Shirazi کہتے ہیں

    As a Pakistani my respect for Imran Khan quadrupled seeing him addressing a group of British parliamentarians. The time doesn’t seems to be too far when world media will be covering his speach to the whole British parliment or even American Congress or Russian and Chinese parliaments. He has ability to speak and whatever he says comes from his heart and more importantly he is truthful and honest. Every Pakistani is and should be proud of him.

    1. Awais Ahmad کہتے ہیں

      Perhaps you are right but my this blog is particularly pointing out the false propaganda and social media psyche. PTI official never said Imran Khan was going to address British Parliament but followers of Imran Khan spread the false news.

  3. moviesbelt.com کہتے ہیں

    ek bat samajh se bilkul bahir hai k niazi sahab k opar yeh bat kyun thopi ja rahi k jo chief sb kar rahe hain wo niazi sahab karwa rahe hain halan k niazi sahab k khud itne cases hain bahar hal bat sidhi se der aye darust aye mulk main insaf to shuru hoa chahe der se he sahi

تبصرے بند ہیں.