اسلام میں ووٹ کی شرعی حیثیت اور ہمارا کردار

2,842

پاکستان کا پورا نام اسلامی جمہوریہ پاکستان ہے۔ یہ ایک اسلامی ملک ہے اور یہاں کی 95 سے97 فیصد آبادی مسلمان ہے۔ پاکستان کے آئین کے مطابق اس ملک کا کوئی قانون اسلام کے منافی نہیں ہو سکتا۔

ایک جمہوری ملک ہونے کے ناطے ووٹ کو پاکستان میں بہت اہمیت حاصل ہے۔ الیکشن میں ووٹ کے ذریعے عوام اپنے ان نمائندوں کو منتخب کرتے ہوئے اپنا پیارا ملک ان کے حوالے کرتی ہے۔ لیکن اپنے ووٹ کے استعمال سے پہلے ان نمائندوں کی اہلیت، قابلیت اور ملک چلانے کی صلاحیت کے متعلق نہیں سوچا جاتا، بلکہ دیکھا صرف یہ جاتا ہے کہ کون ہمارے ووٹ کی کتنی قیمت لگا رہا ہے۔ ووٹ کی یہ قیمت رقم کی صورت یا کسی جھوٹے وعدے کی صورت میں بھی ہو سکتی ہے۔ قیمت جیسی بھی ہو ہم نے تو اپنا ووٹ بیچنا ہی ہوتا ہے۔

ووٹ کو اگر اسلامی شرعی نقطہ نظر سے دیکھیں تو اس کی تین حیثیت نظر آتی ہیں۔ شہادت، شفاعت یا سفارش، اور وکالت۔

شہادت کے معنی گواہی کے ہیں یعنی جب آپ کسی امیدورا کو ووٹ دیتے ہیں تو اس بات کی گواہی دیتے ہیں کہ وہ ایک اچھا انسان ہے، چور،ڈاکو یا کرپٹ طبقہ سے تعلق نہیں رکھتا۔ آپ اس کے صادق و امین ہونے کی گواہی اپنے ووٹ کے ذریعے دے رہے ہوتے ہیں۔ قرآن مجید میں گواہی کے متعلق اللہ تعالیٰ فرماتے ہیں

یٰٓاَیُّہَاالَّذِیْنَ اٰمَنُوْا کُوْنُوْا قَوَّامِیْنَ بِالْقِسْطِ شُہَدَآءَِ ﷲِ وَلَوْ عَلٰٓی اَنْفُسِکُمْ اَوِالْوَالِدَیْنِ وَالْاَقْرَبِیْنَج (النساء ۴:۱۳۵)

اے ایمان والو! تم انصاف پر مضبوطی کے ساتھ قائم رہنے والے (محض) اللہ کے لیے گواہی دینے والے ہو جاؤ خواہ (گواہی) خود تمہارے اپنے یا (تمہارے) والدین یا (تمہارے) رشتہ داروں کے ہی خلاف کیوں نہ ہو۔

جھوٹی گواہی دینے کی صورت میں اسلام میں اس کا جو گناہ و سزا ہے ووٹ دینے والا اس کا مستحق ہو گا۔

ووٹ کی دوسری حیثیت شفاعت یا سفارش کی ہے۔ آ پ اپنے ووٹ کی طاقت کو استعمال کرتے ہوئے اپنے منتخب کردہ امیدوار کو پاکستان کی باگ دوڑ سنبھالنے کیلئے ایک موقع دینے کی سفارش کر رہے ہوتے ہیں۔ سفارش کے متعلق قرآن مجید میں ارشادِ باری تعالیٰ ہے۔

مَنْ یَّشْفَعْ شَفَاعَۃً حَسَنَۃً یَّکُنْ لَّہٗ نَصِیْبٌ مِّنْہَاج وَمَنْ یَّشْفَعْ شَفَاعَۃً سَیِّءَۃً یَّکُنْ لَّہٗ کِفْلٌ مِّنْہَاط (النساء ۴:۵۸)

جو شخص کوئی نیک سفارش کرے تو اس کے لیے اس (کے ثواب) سے حصہ (مقرر) ہے، اور جو کوئی بری سفارش کرے تو اس کے لیے اس (کے گناہ) سے حصہ (مقرر) ہے۔

اگرآپ جانتے ہیں کہ جس کو ووٹ دے رہے ہیں وہ اس قابل نہیں کہ ملک کے کسی ایک ادارہ یا کسی ایک شعبہ کی کو سنبھال سکے تو غلط اور ناجائز سفارش سے نقصان نہ صر ف آ پ کی حد تک رہے گا بلکہ ملک پاکستان کے ادارے بھی نااہل قیادت کے باعث کمزور ہوں گے۔

ووٹ کی تیسری حیثیت وکالت اس لحاظ سے ہے کہ جس امیدوار کو آپ ووٹ دے کر اپنا وکیل مقرر کر رہے ہوتے ہیں، وہ آپ کا نمائندہ ہونے کے ناطے پاکستان کے اعلیٰ عہدوں پر فائز ہو کر ملک و قوم کی ترقی کے ذمہ دار ہوگا۔ اس کے اچھے یا برے فیصلے میں بطور اس کے ووٹرآپ برابر کے شریک ہوں گے۔

قرآن مجید کی تعلیمات کی روشنی میں ہمیں ووٹ کوایک مقدس فریضہ سمجھتے ہوئے اد اکرنا ہو گا۔ اگلے الیکشن میں اپنے ووٹ کے حق کا استعمال کرتے ہوئے اپنے ذہن میں اس بات کو رکھنا ہو گا کہ قیامت کے روز ہم سے جہاں نماز، روزہ، حج اور زکوٰۃ کے بارے میں سوال ہوں گے وہیں ووٹ کے ذریعے دی گئی کسی حکمران کے متعلق ہماری گواہی اور سفارش کا بھی پوچھا جائے گا۔ ہمیں ذات پات، برادری اور تعلق سے ہٹ کر امیدوار کی قابلیت، وطن سے محبت اور اس کے کردار کو دیکھتے ہوئے اپنے ووٹ کا استعمال کرنا ہو گا تب ہی اس ملک میں ترقی کے دروازے کھلیں گے اور امن کی ہوا چلے گی۔

صادق مصطفوی کا تعلق سرگودھا سے ہے۔ روزگار کی وجہ سے سعودی عرب میں رہائش پذیر ہیں۔ ملکی حالات پر گہری نظر رکھتے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

6 تبصرے

  1. Awais Ahmad کہتے ہیں

    بہت عمدہ تحریر ہے۔ جزاک اللہ۔

  2. kashif ahmed کہتے ہیں

    apka blog parh kar aisa laga jesy pakistan ki awam jahil or bikao maal ha or inhon na kabi bhi vote ka sahi istemal nahi kiya is waja se pakistan tabah ho gaya ha mujhe aik bat smjh ma nahi a rahi k achanak aj kal pakistan ki awam ko har koi jahil kion smjhny laga ha her kisi na awam ko biqao maal smjh liya ha bhai agar pakistan ki awam itni hi biqao maal ha to jahangir tareen or aleem khan k pas thora paisa tha ? kharid lety wo awam ko itna rona dhona q much gaya ha achanak 2013 k bad jab tak imran khan ka dhandli wala bayaniya chal raha tha tab tak to awam buhot bashaoor thy ye achanak kiya ho gaya awam ko or phr jo qsar reh gai thi shaoor ma wo 126 din k dharny + propaganda na pori kar k pori pakistan ki qome ko jaga diya tha lakin ab achanak kiya ho gaya ? koi kehta ha k ye awam jahil ha koi kehta ha k qeemy waly naan k badly vote bechty han awam bhai or ap na to had kardi Quraan ki ayat suna kar hamari akhrat k bary ma faisla bhi suna diya or shayad is bat per humein article 62 or 63 k tehat awam ko na ahal bhi kiya ja sakta ha q k supreme court k haliya faisla aya ha k jo king nahi ban sakta wo king maker bhi nahi ban sakta isi trhan agar hum kisi ko vote dein or adliya usko na ahal qarar dy to wo awam bhi na ahal ho jaye gi q k vote to hum awam na diya tha king to hum na banaya tha lehaza in Qurani ayat ki roshni ma awam ko bhi na ahal qarar dy diya jaye is per bhi ap likhein bus yehi reh gai ha qasar hum to mazak ma ye bat karty thy l aik din ye idary tang akar awam ko na ahal qarar dy dein gy or mujhe lagta ha k wo waqt ab haqeeqat ma any wala ha jab articl 62 63 k tehat ghalat logon ko vote deny per thumb verification of votes karwa kar chun chun kar na ahal kiya jaye ga phr kahein ja k ho ga chaman ma deeda war peda

    is k elawa ma ye bhi kehna chahunga k agar koi insan vote leny k bad ghalat kam karta ha to us k zimy dar awam kesy ho gai ? or rahi bat supreme court k faisly ki to aik aisi supreme court jis ki history itni kharab ho jis k faisly hamesha mutanazeh rahy hon us per kesy yaqeen kar lein hum ?

    or akhri bat ye k agar apko is gandi siasat ma islam ka hawala dena hi tha to pora dety adha such jhot se bhi ziada khatar nak hota ha apko QURAAN ki wo ayat or hadess bhi yahan mention karni chahiye thi jis ma aik muntakhib or qanooni islami hakoomat k khilaf baghawat or sazishein karny k bary ma kiya hukam ha ?

    or khoob se khoob tak k chakkar ma humein 1999 ma bhi sabz bagh dikhaye gaye thy bhai or nawaz sharif ko utara gaya tha q k wo chor tha corupt tha or phr us k bad jo imaan dar aye wo in choron se bhi gyae guzry thy ap jesy logon ka to kuch nahi jata lakin loadsheding ka azaab , dehshat gardi bomb blast , karachi ma badamni , mehgai ka tofaan hum awam na bardasht kiya bhai hum buhot dary howe han buhot dasy howe han hum per reham karo humein yehi choor chahiye hum per reham karo bhai awam na buhot dukh dekhy han

    or pakistan ma ye saary tajruby ho chuky han pori awam ko vote deny ka haq hhi nahi tha pehly to sirf ap jesy chand parhy likhy log vote dalty thy phr us door k karnamy bhi dekh lein kiya hashar howa pakistan ka hum na buhot qurbaniyan dy kar ye vote ka haq hasil kiya ha is ko wapis mat cheno kuch socho

  3. جاوید صدیقی کہتے ہیں

    کاشف صاحب اتنا غصہ، ہمیں یہی چور چایئے. واہ کیا ڈائیلاگ مارا ہے.

  4. Mian Atta ul Mustafa کہتے ہیں

    ماشاءاللہ بہت اچھی تحریر ہے

  5. kashif ahmed کہتے ہیں

    sorry for that gussa per me jo kahta hon dil se or demagh se kahta hon kisi lalach ma nahi kahta is liye umeeed ha koi bhi meri tanqeed ko personal nahi ly ga or meri sakht baton ko bardasht kary ga q k mera maqsad apna view dena hota ha jo k ma smjhta hon k thk ha hosakta ha ma ghalat hon

    sadiq mustafa bhai meri koi bat ghalat ya buri lagy to maff karna

  6. ممتاز بنگش کہتے ہیں

    السلام علیکم
    محترم اچھا بلاگ لکھا ہے اور اچھی طرح ثابت بھی کیا ہے کہ ووٹ ایک گواہی ہے اور گواہی کو اسلام میں کافی اہمیت حاصل ہے اور قران میں درست گواہی کی سختی سے تاکید کی گئی ہے لیکن یہاں یہ بات کرنا چاہوں گا کہ ووٹ کے ذریعے تبدیلی لانا ممکن ہے تاہم ووٹ کے درست استعمال اور اچھے اور برے کی پہچان کے لئے عوام کو پارٹی اور اقرباپروری کے خول سے نکل کر صرف صرف ایماندار لوگوں کو ووٹ دینے کے لئے باشعور بنانا ہوگا اس کے علاوہ ہمارے ملک میں الیکشن کرنا صرف مال و زر والوں تک محدود رہ گیا ہے اس لئے عوام کو چاہئے کہ وہ کسی کے بنگلوں اور لمبی لمبی کاروں سے مرعوب نہ ہوں بلکہ اپنے محلے شہر یا ضلع میں ایک ایماندار اور سمجھدار انسان کی تلاش کریں اور انہیں حوصلہ دیں تاکہ وہ لوگوں کی قیادت کے لئے سامنے آئے بیشک اس کے باس مال و دولت نہ ہو اس طرح ہم اشرافیہ کا مقابلہ ایمانداری کی دولت سے کر سکتے ہیں اس کے علاوہ میرا تو خیال ہے کہ اسلام میں جس طرح لیڈر اور حکمران چننے کا طریقہ کار ہے شاید جمہوریت اس سے متصادم ہے
    شکریہ

تبصرے بند ہیں.