بنام عوام۔ ۔ ۔ سیاہی، جوتا اور ہم

3,787

ہماری اخلاقیات کا جنازہ نکل چکا ہے۔ مخالف کو برداشت کرنا تو ہم نے سیکھا ہی نہیں۔ اختلاف رائے کو قبول کرنا ہمیں آتا ہی نہیں۔ اپنے سے الگ سوچ رکھنے والے کو تو ہم جینے کا حق بھی دینا نہیں چاہتے۔

پہلے خواجہ آصف پر سیاہی پھینک دی گئی اور اب نواز شریف پر جوتا پھینک دیا گیا۔ جوتا اچھال کر، سیاہی پھینک کر یوں ہاتھ ہوا میں اٹھا لیتے ہیں جیسے پتہ نہیں غرناطہ فتح کر لیا ہو۔ ہم لوگ شرمناک حد تک اخلاقی گراوٹ کا شکار ہیں۔ ہم میں سے ہر کوئی خود کو فرشتہ اور باقیوں کو شیطان سمجھتا ہے۔ ہم کو بنا ثبوت چور ڈاکو کہنا تو بہت آتا ہے پر اپنے گریبان میں جھانکنے کی توفیق کبھی نہیں ہوتی۔

سیدھی سی بات ہے اگر حکمران چور ہیں، ڈاکو ہیں، لٹیرے ہیں تو تم کیا ہو؟ ہمیشہ تم کو سادہ اور سچا پکارا جاتا ہے۔ تم کہاں کے سادہ ہو اور کیسے سچے ہو؟ دودھ میں پانی تم ملاتے ہو، پانی تو پانی چار پیسے زیادہ بنانے کے لئے زہر بھی ملا دیتے ہو۔ دوائیاں جعلی تم بناتے ہیں۔ دوسروں کے گردے تک نکال لیتے ہیں، پورے پیسے لے کر پٹرول کم اور غیر معیاری دیتے ہیں۔ آٹا، چاول، دال، سبزی، شہد کس جگہ ہم دوسروں کو چونا لگانے سے باز نہیں آتے۔ اگر حکمرانوں کی لوٹ مار سے اتنی ہی دقت ہے تو پہلے خود کو ٹھیک کرو۔

اپنا ووٹ تو تم بریانی کے بدلے بیچ دیتے ہو۔ کبھی پولیس سے بندا چھڑوانے پر ووٹ دے دیتے ہو، کہیں ٹرانسفارمر لگوا کر بک جاتے ہو۔ کبھی ہزار ہزار روپیہ لے کر چہرے پر بلا، تیر اور شیر چھپوا لیتے ہو۔ بدبختو، تم کس منہ سے لٹیروں کا محاسبہ کرو گے تم تو خود سب سے بڑے لٹیرے ہو۔ کسی کو جوتا مارنے سے کچھ نہیں ہو گا، جوتا مارنا ہی ہے تو اپنے سر پر مارو۔

یہ سیاہی جو دوسروں پرانڈیل کر بڑھکیں مارتے ہو، یہی سیاہی اپنے انگھوٹھے پر لگاتے اور ان چوروں اور لٹیروں کو نکال باہر کرتے۔ پر تم ایسا کیوں کرو گے؟ تم توخود ان لٹیروں سے بڑے لٹیرے ہو۔ تم ان کو لاتے ہو۔ اس لئے جوتا نہیں جوتے مارو لیکن ان کو نہیں اپنے آپ کو۔ سیاہی کے ڈرم انڈیل دو لیکن ان پر نہیں خود پر۔ تم پر ایسے حکمران مسلط کئے گئے ہیں۔ اللہ کا قانون ہے کہ جیسی عوام ویسے حکمران، اگرتم واقعی اچھے ہوتے تو تم کو اچھے حکمران ضرور ملتے۔

سنو، جب تک اپنے اندر کا گند نہیں مٹاؤ گے، یونہی ذلیل ہوتے رہو گے۔ ان کو بدلنا ہے تو پہلے خود کو بدلو، خود بدبو میں لھتڑے ہو اور چاہتے ہو کہ صاف ستھرے حکمران ملیں۔ ایسا نہ کبھی ہوا ہے دنیا میں نہ ہوگا، جب تک خود کو نہیں بدلو گے تب تک تم کو نواز، زرداری، فضل، اسفندیاراور مشرف تو ملے گا لیکن ابو بکر، عمر اور علی کا سوچنا بھی نہ، پھر چاہے کچھ بھی پھینکو۔

میں قانون نافذ کرنے والے اداروں سے گزارش کرتا ہوں جوتے سیاہی پھینکنے والوں کو کڑی سے کڑی سزا دی جائے، ہر بار کی طرح ان کو معاف نہ کیا جائے۔ ان کی معافی نہیں بنتی چھترول بنتی ہے اور سرعام بنتی ہے۔ ہم بات کی نہیں ڈنڈے کی زبان سمجھنے والی قوم ہیں۔ ڈنڈا پیر ہے بگڑوں تگڑوں کا، اگر ان کو قرار واقعی سزا نہ دی گئی تو یہ مائینڈ سیٹ بن جائے گا۔ اگر ایسا نہ کیا گیا تو اختلاف رائے پر دلیل کی بجائے جوتے اور سیاہیاں ہی چلیں گی۔ آزادی رائے کا حق سب کو ہونا چاہئیے لیکن مادر پدر آزادی کسی کو نہیں ہونی چاہئیے۔

واصف ملک شعبہ صحافت سے منسلک ہیں۔ تحقیقاتی رپورٹر، کالم نگار، اور بلاگر ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

100 تبصرے

  1. Nadia کہتے ہیں

    Bilkul sahi bat ki hai. Bhai. Hum log hain he issi qabil. Humko iss se b buray hukmran milne chahye

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      Thank u.

      1. Nadia کہتے ہیں

        You are welcome.

  2. ناکام بلاگر کہتے ہیں

    اس بلاگ کو دیکھ کر ڈپریشن میں جاتے ہوے آپ سے عرض. ہے کے،
    دودھ، پانی، ادویات وغیرہ کا سارا الزام نوازشریف کے سر پر ڈال دیا، جب کے پاکستان میں جمہوری حکومت کے دور سے زیادہ مارشل لاء کا دور رہا ہوا ہے، اسلیے یہ سب کام اس مندرجہ بالا بلاگ کے اگلے ہی دن مکمل نہیں ہوسکتے،
    سیاہی پھینکنے کے عمل کا تعلق مزہبی انتہاء پسندی سے ہے، اور نواز شریف خوش قسمت ہیں کے ان کے مخالف کے ہاتھ میں مجوتا تھا، مشین گن نہیں، ورنہ سلمان تاثیر کی طرح مارے جاتے،

    1. khalid gujjar کہتے ہیں

      ناکام بھائی، یہ کالم بنام عوام ہے، دودہ پانی، ادویات کا الزام نواز شریف پر نہیں لگایا بلاگر نے بلکہ پبلک سے مخاطب ہے۔

    2. واصف ملک کہتے ہیں

      ناکام بھائی میں نے دودھ، پانی، دوائی سمیت کچھ بھی نواز شریف پر نہیں ڈالا. بلکہ یہ نوحہ بنام عوام ہے. ان کو کہہ رہا ہوں کہ ہم کون سے بہت نیک ہیں. جو ہم کو عمر چاہئے.

    3. Jamshed Asad کہتے ہیں

      ناکام بھائی اب آتے ہی نہیں

    4. salman bin ali کہتے ہیں

      ماری اخلاقیات کا جنازہ نکل چکا ہے۔ مخالف کو برداشت کرنا تو ہم نے سیکھا ہی نہیں۔ اختلاف رائے کو قبول کرنا ہمیں آتا ہی نہیں۔ اپنے سے الگ سوچ رکھنے والے کو تو ہم جینے کا حق بھی دینا نہیں چاہتے

    5. Nadia کہتے ہیں

      Nakam never comes back

  3. Jamshed asad کہتے ہیں

    سیدھی سی بات ہے اگر حکمران چور ہیں، ڈاکو ہیں، لٹیرے ہیں تو تم کیا ہو؟ ہمیشہ تم کو سادہ اور سچا پکارا جاتا ہے۔ تم کہاں کے سادہ ہو اور کیسے سچے ہو؟ دودھ میں پانی تم ملاتے ہو، پانی تو پانی چار پیسے زیادہ بنانے کے لئے زہر بھی ملا دیتے ہو۔ دوائیاں جعلی تم بناتے ہیں۔ دوسروں کے گردے تک نکال لیتے ہیں، پورے پیسے لے کر پٹرول کم اور غیر معیاری دیتے ہیں۔ آٹا، چاول، دال، سبزی، شہد کس جگہ ہم دوسروں کو چونا لگانے سے باز نہیں آتے۔ یان

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      Thank u jamshed bhai.

    2. tayyaba کہتے ہیں

      چونا بھی لگا جاتے اور پتہ بھی نہیں لگنے دیتے

      1. Jamshed asad کہتے ہیں

        ایسا ہی یے.

    3. Nadia کہتے ہیں

      No differance between public and leaders.

  4. Waseem akhtar کہتے ہیں

    Aaina na dikhao bhai hum ko. Hum ko farishta he rahny do.

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      نابینا شہر میں آئینہ.. کون دیکھے گا، کیسے دیکھے گا.وسیم صاحب

      1. Jamshed asad کہتے ہیں

        درست فرمایا.

      2. Waseem akhtar کہتے ہیں

        U right mr malik.

    2. Jamshed Asad کہتے ہیں

      aaina dikhaya tu bura maan gay

  5. قاضی ظفر کہتے ہیں

    مسو لینی کہا تھا ، عوام ، اور عورت سختی پسند ہوتے ہیں

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      مسولینی کو چھوڑین قاضی صاحب، آپ فرمائے آپ کیا کہتے ہیں.

    2. Jamshed Asad کہتے ہیں

      kuch mard bhi sakhti pasand hotay hain qazi

    3. Waseem akhtar کہتے ہیں

      Qazi saheb ethics plz.

  6. Mohmmad کہتے ہیں

    سر عوام اتنى عرصى سى جوتى كها رهي هى. ايك اده اكر ليدرون نى كها ليا تو كيا هوا. يه كوءى برى بات نهين.

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      جی بالکل ٹھیک ہے. ان کو بھی پڑ گئی تو کچھ نہیں ہوا. پر ٹھکائی کچھ کم نہیں ہوئی محمد بھائی؟

    2. Waseem akhtar کہتے ہیں

      Mohammed public also really bad.

  7. امجد اقبال کہتے ہیں

    مجھے افسوس سے کہنا پڑتا ہے کہ میں مصنف سے بالکل مطفق ہوں۔ اگر ہم عوام ہی اپنا لالچ نہیں چھوڑے گے تو حکمران تو ایسے ہی اآئے گے۔ ہم کو اگر اچھے لیڈر چاہئیں تو ہم کو اس قابل بننا ہو گا۔
    خودی کو کر بلند اتنا کے ہرتقدیر سے پہلے
    خدا بندے سے خود پوچھے بتا تری رضا کیا ہے

    مصنف کی باتین تلخ ضرور ہیں پر مبنی بر حقیقت ہیں۔

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      میں بخوشی کہہ رہا ہوں. میں آپ کا شکرگزار ہوں سر.

      1. امجد اقبال کہتے ہیں

        ہاہاہا. گڈ

        1. امجد اقبال کہتے ہیں

          سنو، جب تک اپنے اندر کا گند نہیں مٹاؤ گے، یونہی ذلیل ہوتے رہو گے۔ ان کو بدلنا ہے تو پہلے خود کو بدلو، خود بدبو میں لھتڑے ہو اور چاہتے ہو کہ صاف ستھرے حکمران ملیں۔ ایسا نہ کبھی ہوا ہے دنیا میں نہ ہوگا، جب تک خود کو نہیں بدلو گے تب تک تم کو نواز، زرداری، فضل، اسفندیاراور مشرف تو ملے گا لیکن ابو بکر، عمر اور علی کا سوچنا بھی نہ، پھر چاہے کچھ بھی پھینکو۔

          1. امجد اقبال کہتے ہیں

            ہپ پیراگراف جان ہے کالم کی.

      2. امجد اقبال کہتے ہیں

        شکریہ واصف.

  8. عالیہ شیخ کہتے ہیں

    بریانی پر ووٹ بیش دینے والی قوم کو لی کوان یو تو ملنے سے رہا۔ حکمران ہمارا ہی چہرہ ہیں۔ جیسے عوام ویسے حکمران۔ بلکہ جیسا منہ ویسی چپیڑ

    1. واصف ملک کہتے ہیں
    2. zahid shaikh کہتے ہیں

      qeemay walay naan tu aap bhool gay

  9. khalid gujjar کہتے ہیں

    ہ سیاہی جو دوسروں پرانڈیل کر بڑھکیں مارتے ہو، یہی سیاہی اپنے انگھوٹھے پر لگاتے اور ان چوروں اور لٹیروں کو نکال باہر کرتے۔ پر تم ایسا کیوں کرو گے؟ تم توخود ان لٹیروں سے بڑے لٹیرے ہو۔ تم ان کو لاتے ہو۔ اس لئے جوتا نہیں جوتے مارو لیکن ان کو نہیں اپنے آپ کو۔ سیاہی کے ڈرم انڈیل دو لیکن ان پر نہیں خود پر۔ تم پر ایسے حکمران مسلط کئے گئے ہیں۔ اللہ کا قانون ہے کہ جیسی عوام ویسے حکمران، اگرتم واقعی اچھے ہوتے تو تم کو اچھے حکمران ضرور ملتے۔

    ظالما اتنا کڑوا سچ کیوں لکھتے ہو۔ ہمیں خواب غفلت سے جگانے کی کوشش نہ کرع۔ جاگتا وہ ہے جو سویا ہو ہم تع مرے ہوئے ہیں۔

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      اوکے گجر صاحب، آئندہ خیال رکھوں گا.

      1. khalid gujjar کہتے ہیں

        ازراہ مذاق کہا تھا ۔ آپ لکھتے رہیں۔ بلکہ ٹع وی پر آئیں۔ تصوعیر سے واضح ہے اچھے خاصے حسین ہیں۔

        1. wasif malik کہتے ہیں

          thank you

    2. kainat sipra کہتے ہیں

      بڑھکیں تو ویسے گجروں کی مشہور ہیں

  10. سلمان داود کہتے ہیں

    تعلیم کا جنازہ نکالنے والے , ملکی معیشت کا جنازہ نکالنے والے کی اگر عزت کا جنازہ نکل گیا ہے تو اس پہ تڑپنے کی کیا بات ہے حضرت. خالی پیٹ بھوک کی ماری قوم ہسپتالوں میں ,نادرا کے دفاتر میں ذلیل وخوار ہونے والی قوم کو اخلاقیات سکھانے کی ضرورت نہیں ان بیچاروں کے پاس بھی جب پیٹ بھر کے روٹی کھانے کے پیسے آجائیں گے اور ان حکمرانوں کی نااہلی کی وجہ سے رشوت کے نظام سے نمٹنے کیلئے پیسے آجائیے گے تو اخلاقیات بھی سیکھ جائیں گے … غربت اور مجبوریا بہت ظالم چیز ہیں محترم .آپ اخلاقیات کی بات کرتے ہیں بیچارے کی علمی سطح کا انداذہ کیجئے کہ معاشی قتل اور رسول کی گستاخی کا بدلہ فقط روشنائی .ان حکمرانوں نے ایک اورنج ٹرین کے برابر بھی بجٹ تعلیم کیلئے بنایا ہوتا تو یہ سیاہی کالک بن کر ان کے منہ پر نہ ہوتی بلکہ روشنائی بن کر کسی کتاب کا حصہ ہوتی
    اس نادان کی گستاخی معاف کرنا حضور میرے علم کی حد یہی تک تھی جو لکھ دیا
    بڑے آے اخلاقیات کا رونا رونے والے

    1. Sajid khan aurakzai کہتے ہیں

      جو آئینہ دکھایا تو برا مان گئے. بھائی اللہ نے اخلاقیات دکھانے کے لئے پیسے کی شرط نہیں رکھی. رشوت چور بازاری، لوٹ مار کی قیمت ایک جوتی صاحب .بات کچھ جمی نہیں. کبھی قیمے والے نان پر بکتے ہو کبھی بریانی پر. کبھی واشنگ مشین لے لیتے ہو کہیں نسلی بنوا کر اپنا مستقبل گروی رکھ دیتے ہو. ایسا کرو گے تو ایسا ہی ہوگا سلمان دائود بھائی. اب روتے کیوں ہو. بدلہ لینا ہے تو سیاہی انگھوٹے پر لگائو انگھوٹھے پر میرے ناسمجھ ببوا

    2. واصف ملک کہتے ہیں

      جواب شکواہ بہت طویل ہو گیا بھائی سلمان مسکراتے رہئے.

    3. salman bin ali کہتے ہیں

      ہ سیاہی جو دوسروں پرانڈیل کر بڑھکیں مارتے ہو، یہی سیاہی اپنے انگھوٹھے پر لگاتے اور ان چوروں اور لٹیروں کو نکال باہر کرتے۔ پر تم ایسا کیوں کرو گے؟ تم توخود ان لٹیروں سے بڑے لٹیرے ہو۔ تم ان کو لاتے ہو۔ اس لئے جوتا نہیں جوتے مارو لیکن ان کو نہیں اپنے آپ کو۔ سیاہی کے ڈرم انڈیل دو لیکن ان پر نہیں خود پر۔ تم پر ایسے حکمران مسلط کئے گئے ہیں۔ اللہ کا قانون ہے کہ جیسی عوام ویسے حکمران، اگرتم واقعی اچھے ہوتے تو تم کو اچھے حکمران ضرور ملتے۔

    4. rashid kualalumpuri کہتے ہیں

      سنو، جب تک اپنے اندر کا گند نہیں مٹاؤ گے، یونہی ذلیل ہوتے رہو گے۔ ان کو بدلنا ہے تو پہلے خود کو بدلو، خود بدبو میں لھتڑے ہو اور چاہتے ہو کہ صاف ستھرے حکمران ملیں۔ ایسا نہ کبھی ہوا ہے دنیا میں نہ ہوگا، جب تک خود کو نہیں بدلو گے تب تک تم کو نواز، زرداری، فضل، اسفندیاراور مشرف تو ملے گا لیکن ابو بکر، عمر اور علی کا سوچنا بھی نہ، پھر چاہے کچھ بھی پھینکو۔

  11. واصف ملک کہتے ہیں

    پیارے بھائی مجھے ان سے ہمدردی کوئی نہیں ہے جو لوٹ کر کھا گئے مجھے تو یہ دکھ ہے کہ بہت کم سزا دے رہے ہم لوگ ان کو. انکو سزا دینی ہے تو وہی کرو جو میں اپنے آرٹیکل میں لکھا ہے. اور وہ یہ کہ ان کو ووٹ کی طاقت سے نکال باہر کرو. تاکہ تم کو کوئی لوٹے نہیں. اگر بیچ چوراہے یوں لٹنے کے لئے ریڈی بیٹھو گے تو لٹیرے تو لٹیرے سادھو بھی لوٹ لیں گے. برادر عزیز. والسلام

  12. فاحد انعام کہتے ہیں

    آپ کے اس بلاگ سے تھوڑا اختلاف ہے واصف ملک صاحب. میرا خیال ہے کرپٹ لیڈروں کے ساتھ اس سے بھی برا سلوک ہونا چاہئے.

  13. Hammad کہتے ہیں

    Nawaz sharif aik corrupt leader hai. Ap ki bat sahi hai k in ko joota marnay ki bajae nikal bahir krma chahy. Humari awam beshur hai

  14. جہانزیب کہتے ہیں

    وہ جوتا کھا کر یوں معصوم بن رہا ہے. جیسے سارے گناہوں کی سزا بھگت لی ہو.

    1. واصف ملک کہتے ہیں
  15. فرید خٹک کہتے ہیں

    آپ کے سارے ہی آرٹیکل پڑھ لئے. آپ قلم سے نہیں دل سے لکھتے ہیں. مجھے اس کالم سے اختلاف ہے. لیکن آپ کی تحریر بہت اچھی ہے. اس لئے جانے دیتا ہوں.

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      .بہت شکریہ آپ کا فرید صاحب. میں ممنون ہوں

      1. فرید خٹک کہتے ہیں

        کوئی بات نہیں سر.

        1. واصف ملک کہتے ہیں
    2. salman bin ali کہتے ہیں

      خٹک صاحب آپ کون سے علاقے سے ہیں

    3. rashid kualalumpuri کہتے ہیں

      کاش کورس کی کتابیں بھی پڑھ لی ہوتیں

  16. کامران شیخ کہتے ہیں

    ویسے خواجے کی شکل دیکھ کے ترس بیت آرہا ہے.

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      آپ کا دل حساس ہے کامران بھائی.

      1. کامران شیخ کہتے ہیں

        ویسے تو مجھے برا نہیں لگا سیاہی اور جوتا پڑتے دیکھ کر مگر اس تصویر میں کوئی بات ایسی ہے کہ ترس آرہا ہے.

        1. واصف ملک کہتے ہیں

          وہ بھی بھول گئے آپ بھی بھول جائیں.

  17. واجد خان کہتے ہیں

    ڈنڈا پیر ہے بگڑوں تگڑوں کا، اگر ان کو قرار واقعی سزا نہ دی گئی تو یہ مائینڈ سیٹ بن جائے گا۔ اگر ایسا نہ کیا گیا تو اختلاف رائے پر دلیل کی بجائے جوتے اور سیاہیاں ہی چلیں گی۔ آزادی رائے کا حق سب کو ہونا چاہئیے لیکن مادر پدر آزادی کسی کو نہیں ہونی چاہئیے۔

  18. واجد خان کہتے ہیں

    یہ ڈنڈے والی بات بالکل ٹھیک ہے.

  19. علی عمران کہتے ہیں

    مجھے کیوں نکالا.مجھے کیوں نکالا. نہ اس دن نکلتا تو نہ جوتا پڑتا

  20. کرن نور کہتے ہیں

    Exceptionally well writen to the point.

  21. صابر علی کہتے ہیں

    صبرن جمیلن المسلسل

    1. واصف ملک کہتے ہیں

  22. آفتاب کہتے ہیں

    گو نواز گو اینڈ رو عمران رو. سب چور ہیں . اس ملک کا خدا ہی حافظ ہے.

  23. Salma کہتے ہیں

    ہم دوسروں کے لئے جج بن جاتے ہیں اور اپنی باری آئے تو اپنے وکیل ہوتے ہیں. حکمران برے ہیں. کوئی شک نہیں. کیا عوام اچھی ہے؟

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائ کی.

  24. نیا پاکستانی کہتے ہیں

    چوتا کھایا ہے کھایا ہے جوتا کھایا ہے. بڑے دنوں کے بعد اس ناایل نے یار، جوتا کھایا ہے.

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      شاعری زبردست ہے

    2. khalid gujjar کہتے ہیں

      گا کے سناو تو مانو

  25. رانا فرمان کہتے ہیں

    اپنا ووٹ تو تم بریانی کے بدلے بیچ دیتے ہو۔ کبھی پولیس سے بندا چھڑوانے پر ووٹ دے دیتے ہو، کہیں ٹرانسفارمر لگوا کر بک جاتے ہو۔ کبھی ہزار ہزار روپیہ لے کر چہرے پر بلا، تیر اور شیر چھپوا لیتے ہو۔ بدبختو، تم کس منہ سے لٹیروں کا محاسبہ کرو گے تم تو خود سب سے بڑے لٹیرے ہو۔ کسی کو جوتا مارنے سے کچھ نہیں ہو گا، جوتا مارنا ہی ہے تو اپنے سر پر مارو۔

  26. رانا فرمان کہتے ہیں

    تب تک تم کو نواز، زرداری، فضل، اسفندیاراور مشرف تو ملے گا لیکن ابو بکر، عمر اور علی کا سوچنا بھی نہ، پھر
    چاہے کچھ بھی پھینکو۔

    مولانا فضل الرحمان ان سب میں سے بہتر ہیں.

  27. رانا فرمان کہتے ہیں

    میں قانون نافذ کرنے والے اداروں سے گزارش کرتا ہوں جوتے سیاہی پھینکنے والوں کو کڑی سے کڑی سزا دی جائے، ہر بار کی طرح ان کو معاف نہ کیا جائے۔ ان کی معافی نہیں بنتی چھترول بنتی ہے اور سرعام بنتی ہے

    جناب ان لیڈروں کی چجترول کیوں نہیں بنتی؟

  28. مریم حمزہ کہتے ہیں

    کہتے ہیں فرسٹریشن میں ایسا کیا. کبھی کہتے ہیں کتھارسس ہو گیا. بھئی یہ کیسی فرسٹریشن ہے جو جوتا اچھال کر نکل جاتی ہے

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      آپ کو سمجھ آجائے تو مجھے بھی سمجھا دیجئے گا.

  29. جاوید کہتے ہیں

    نواز تے خواجے دی پین دی سری

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      خادم حسین کی بھی ہو رہی آجکل

  30. salman کہتے ہیں

    according to Nawaz himself, he is the name of an ideology, but I say that Nawaz’s ideology is nothing but corruption.

  31. mustafa کہتے ہیں

    A day after ink was thrown on Foreign Minister Khawaja Asif in Sialkot, a shoe was thrown at PML-N’s supreme leader Nawaz Sharif in Lahore on Sunday, this is a bad trend. will take everything by storm.

  32. واصف ملک کہتے ہیں

    خادم حسین کی بھی ہو رہی آجکل

    1. khalid gujjar کہتے ہیں

      خادم رضوی پکڑا گیا ہے یا نہیں ابھی؟

      1. wasif malik کہتے ہیں

        نہیں

        1. khalid gujjar کہتے ہیں

          سوائے نواز صریف کہ کوئی نہیں پکڑا گیا یعنی کہ۔۔۔۔

          1. sundus کہتے ہیں

            نواذ شریف بھی ان کے قابو نہیں آنا

          2. rashid kualalumpuri کہتے ہیں

            janab tussi fer inkar hy samajh lowo

          3. Wasif malik کہتے ہیں

            Koi b ni

  33. دانش یوسف زئی کہتے ہیں

    دا د لیکلو د یو ښه ټوټه. کېدی شي چې تاسو د ژوند د اوږد

  34. Jahanzeb aslam کہتے ہیں

    Ab sab siyasatdano ki waat lgay gy.

  35. rashid kualalumpuri کہتے ہیں

    سیدھی سی بات ہے اگر حکمران چور ہیں، ڈاکو ہیں، لٹیرے ہیں تو تم کیا ہو؟ ہمیشہ تم کو سادہ اور سچا پکارا جاتا ہے۔ تم کہاں کے سادہ ہو اور کیسے سچے ہو؟ دودھ میں پانی تم ملاتے ہو، پانی تو پانی چار پیسے زیادہ بنانے کے لئے زہر بھی ملا دیتے ہو۔ دوائیاں جعلی تم بناتے ہیں۔ دوسروں کے گردے تک نکال لیتے ہیں، پورے پیسے لے کر پٹرول کم اور غیر معیاری دیتے ہیں۔ آٹا، چاول، دال، سبزی، شہد کس جگہ ہم دوسروں کو چونا لگانے سے باز نہیں آتے۔ اگر حکمرانوں کی لوٹ مار سے اتنی ہی دقت ہے تو پہلے خود کو ٹھیک کرو۔

  36. fiyyaz nushahi کہتے ہیں

    This is the hidden importance of great titles, and why getting them right is so vital to a successful blog. good work with research.

  37. fiyyaz nushahi کہتے ہیں

    I find myself surprised that they can’t see the strength of their own words. thats why taking jutaas

  38. afzaal chattha کہتے ہیں

    خواجہ آصف میرے ژہر سے ہے لاکین کسی سے سیدھے منہ بات کرنا اپنی توہین سمجھتا ہے

  39. afzaal chattha کہتے ہیں

    ۔ہمیں یاد ہے جب یہ سکوٹر پر پھرتا ہوتا تھا۔ کہاں سے آگیا اس کے پاس اتنا پیسہ

  40. Munna کہتے ہیں

    Nice

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      Thanks

  41. captain bunty کہتے ہیں

    sarasar galat bat hai bat hai ikhlaqi tor pe puri qom ko khud ko darust karna chahye

    1. واصف ملک کہتے ہیں

      کیپٹن صاحب صحیح فرمایا آپ نے

  42. جاوید صدیقی کہتے ہیں

    مادام، آپ ابھی بھی نہیں پہنچیں. ہم کو آرڈر ہمارا دل دیتا ہے. جو برا لکھے گا اس پر تنقید کریں گے جو اچھا لکھے گا اس کی تعریف. میں 1980 سے جرنلزم کر رہا ہوں. مجھے کوئی آرڈر نہیں دے سکتا. آپ آج اچھا لکھیں. ہم آج تعریف کریں گے. ورنہ یہی ہوتا رہے گا کہ آپ کبھی اس پر کبھی اس پر شک کریں گی لیکن کچھ نہیں ہو گا. کیونکہ کمی آپ میں ہے. یہی سچائی ہے. آپ صرف جو لکھتی ہیں ایک بار پڑھ لیا کریں. آپ کو سمجھ آجائے گی کہ اپ کی دشمن آپ خود ہیں.

تبصرے بند ہیں.