گستاخانہ خاکے اور امت ِ مسلمہ!

346

مغرب کے مختلف ممالک میں وقتاً فوقتاً رحمت اللعالمین ﷺکی شان میں گستاخی، قرآن کریم کی بے حرمتی کی ناپاک حرکتیں منظر عام پر آتی رہی ہیں اور یہ تسلسل جاری ہے۔ ان نازیبا حرکات کا بنیادی مقصد امتِ مسلمہ کی دِ ل آزاری اور جذبات کو مجروح کرنا ہوتا ہے۔ کسی انسان کی بے حرمتی، توہین اور جذبات کو مجروح کرنے کی کوئی بھی مہذب معاشرہ اجازت نہیں دیتا اور نہ ہی یہ ضابطہ اخلاق ہے۔

پھر ایسی حرکت کہ کبھی نازیبا الفاظ کا استعمال، کبھی کارٹون، کبھی فلموں کی شکل میں بے حرمتی، جس سے امتِ مسلمہ کی دِل آزاری کے ساتھ ہی ایک ایسی ہستی کے حوالہ سے توہین کی ناکام جسارت کی جاتی ہے جن کی خاطر یہ کائنات معرض وجود میں آئی۔ اگر اس زوایہ سے دیکھا جائے تو یہ بات اظہر من الشمس ہے کہ جن کا ذکر خود اللہ تعالیٰ نے بلند کیا ہو، ان کا دُنیا کیسے مقام و مرتبہ کم کرنے کی جسارت کر سکتی ہے، ماسوائے گستاخوں کی اپنی ناکامی کے اس میں کوئی بھی حقیقت نہیں ہے۔ لیکن یہ بالمعوم انسانیت اور بالخصوص امتِ مسلمہ کے ایمان کا سنگین معاملہ ہے۔ دُنیا میں جتنے بھی رہنما تشریف لائے، وہ انسانی معاشرت کی راہنمائی کے لیے آئے۔ ان تمام میں سے نبی پاکﷺ وہ مقدس ترین ہستی ہیں جو تمام جہانوں کے لیے ہدایت ہی نہیں بلکہ رحمت بھی ہیں۔ آپ ﷺ جیسی مقدس ہستی کی عزت و توقیر نے ہی انسانیت کو عزت و احترام، امن، بھائی چارہ، آداب زندگی اور شعور بخشا۔ ان کی توہین کو کوشش گویا پوری انسانیت کی توہین ہے۔

یہ وہ عظیم ہستی ہیں جو وجہ تخلیقِ کائنات ہیں۔ آپﷺ کی عظمت در حقیقت اللہ کریم کی عظمت ہے اور آپﷺ کی عظمت کا ادراک درحقیقت انسانیت کی عظمتوں کا اساس ہے۔ دُنیا بھر میں امن کے دُشمن ادیان کے درمیان غلط فہمیاں پیدا کرکے دُنیا میں فساد برپا کیے ہوئے ہیں۔ ساری دُنیا جانتی ہے کہ مسلمانوں نے اسلام کو بزور شمشیر نہیں پھیلایا بلکہ نبی پاکﷺ کی عظمت کو دلوں میں راسخ کیا اور ان کے طریقوں سے ہی دُنیا میں امن قائم ہوا۔

جدید دورکو ایک گلوبل ویلج میں تبدیل کر دیا گیا وہاں اظہار رائے کی آزادی کے نام پر بھی بہت سے فتنے سر اُٹھا رہے ہیں۔ نبی پاکﷺ کی ختم نبوت کے حوالے سے یورپی ممالک اور امریکہ میں رسالت مآبﷺ کی شان اقدس میں گستاخانہ اندازاختیار کیا جا رہا ہے۔ یہ واقعات پہلے بھی تھے لیکن بہت ہی کم ، اگر یوں کہا جائے کہ سوشل میڈیا اِس حوالے سے فساد کی جڑ ہے تو بے جا نہ ہوگا۔ کیا یہ ممکن ہے کہ آزادی رائے اس قدر اخلاقی حدود پھلانگ جائے، اس قدر مادر پدر آزاد بن جائے کہ جو ہستی ، جو کتاب محبت و ہدایت اور رحمت کا منبع ہو،ان کے خلاف یوں نازیبا الفاظ لکھیں اور پھر تشہیر بھی کی جائے۔ یہ افسوس ناک ہی نہیں بلکہ شرمناک بھی ہے۔

اسے اظہارِ رائے کی آزادی سے جوڑ دیا جانا اس سے بھی بدتر ہے۔ یہ بالعموم ضابطہ اخلاق، انسانیت کی بے توقیری و توہین ہے ۔ وہ جو انسانیت کی معراج اور اعلیٰ ترین اقدار کے علمبردار ہیں، انہیں یہ کیوں نظر نہیں آتا؟ کیا سوشل میڈیا کی اربوں کھربوں ڈالر کی سرمایہ کاری، انسانیت کی توہین سے بڑھ کر ہے؟

ہر ذی شعور یہ بخوبی جانتا ہے کہ اللہ پاک نے یہ کائنات اپنے محبوب نبی پاکﷺ کے لیے تخلیق کی اور آپﷺ کی بدولت ہیں۔ سارے جہانوں کے اندر جان ہے اور نظامِ کائنات ان ہی کی بدولت رواں دواں ہے۔ ہر مسلمان کے اندر روح محمد ﷺ ہے۔

جدید سائنسی ترقی نے حیاتِ انسانی کو سہل کیا، اس کے مثبت استعمال نے نئی راہوں کے در کھولے، اس میں کوئی دوسری رائے نہیں لیکن یہ سب کچھ انسانیت سے بڑھ کر ہرگز نہیں ہیں۔ آزادی رائے کی آڑ میں اَدب واحترام کا دامن کبھی بھی چھوڑا جانا چاہیے۔ اور پھر ایسی مقدس ترین ہستی کے حوالہ سے نازیبا الفاظ یا خاکے کسی صورت نہیں ہونے چاہیے۔ رحمت اللعالمین ﷺ کی عزت و تکریم ، درحقیت اللہ پاک سے محبت اور تکریم ہے۔ نام نہاد آزادیِ اظہار کے علمبرداروں کو یہ بات سمجھ جانی چاہیے کہ یہ ایک ہستی کی نہیں بلکہ پوری انسانیت اور بالخصوص امت مسلمہ کی توہین اور دِل آزاری ہے۔ یہ عمل بنیادی انسانی حقو ق کے بھی متصادم ہے۔ یہ کم علمی جاہلیت ہے کہ آپ خود تو انسانی حقوق کے علمبردار کہلائیں لیکن انسانیت کو اپنے ہی پاوں تلے روند ڈالیں۔

اللہ کے محبوب ﷺ کی ذات اقدس کے حوالے سے گستاخی مرتکب ہوتی رہیں۔ بقول حضرت اقبالﷺ ہر مسلمان کی اند روح محمدﷺ ہے اور اِس روح محمدﷺ کا یہ کمال ہے کہ ہر مسلمان اپنا آقا کریمﷺ سے اپنی جان مال اولاد سے بڑھ کر محبت کرتاہے۔آج بھی انسانی حقوق کا حوالہ دے کر جو انسانیت کی توہین کی جاتی ہے وہ اقبالؒ کے اشعار سے بخوبی سمجھا جا سکتا ہے۔ دیو استبداد جمہوری قبا میں پائے کوب، تُو سمجھتا ہے یہ آزادی کی ہے نیلم پری، ے وہی سازِ کہن مغرب کا جمہوری نظام جس کے پردوں میں نہیں غیر از نوائے قیصری!

مسلمان اربوں کی تعداد میں کرہ ارض پر آباد ہیں، دُنیا میں زندہ قوموں اپنے بنیادی ایمان و عقائد کی حفاظت کرتی ہیں۔ نبی مہربان ﷺجب تک ہر مومن کو اپنی جان پنے ماں باپ، اپنی اولاد اور دُنیا کے ہر انسان سے زیادہ محبوب نہ ہو جائیں وہ اللہ کی نظروں میں حقیقی مومن نہیں کہلا سکتا۔ ہماری تو پہچان ہی ہمارے آقا و مولا ﷺہیں۔ در دلِ مسلم مقامِ مصطفی است، آبروئے ما زنام مصطفی است۔

ہالینڈ ہو یا کوئی بھی ملک قوم انہیں ایسی ناپاک جسارت نہیں کرنی چاہیے جس سے نہ صرف انسانیت کی تذلیل ہو بلکہ دُنیا کا امن داؤ پر لگ جائے۔ ایسے توہین آمیز واقعات سے مسلمانوں کے جذبات بُری طرح مجروح ہورہے ہیں۔ ایسی صورت میں لازم ہے کہ سوشل میڈیا ہو یا کوئی بھی اظہار رائے کا پلیٹ فورم اس کا منفی استعمال روکا جائے ۔ ضابطہ اخلاق کے ساتھ مثبت اور تعمیری و فلاحی استعمال کیا جاناچاہیے جس سے امن و بھائی چارے کی فضا قائم ہو اور دُنیا امن کا گہوارہ بن سکے کیونکہ اسلام وہ امن پسند دین ہے جو نام ہی امن، بھائی چارے محبت ¾ الفت، خیر خواہی کا نام ہے۔ پوری دُنیا کا امن تباہ کرنے کی ایسی کوشش کو روکنے کے ساتھ ہی ایسے واقعات کی حوصلہ شکنی ہونی چاہیے۔ ہر مذہب و قوم کے عقائد، مقدس مقامات، مقدس ہستیوں کی عزت و تکریم ہمیں اسلام نے بتائی ہیں۔ اسلام ہی دینِ فطرت ہے اسی میں بھلائی ہے۔اور پھر یہ واقعات امتِ مسلمہ کو جھنجوڑ رہے ہیں کہ متحد ہو جائیں۔

نوٹ: ادارے کا قلمکار کے خیالات اور پیش کردہ مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں

عابد ضمیر پیشہ ور صحافی ہیں، کرنٹ افیئرز سمیت دیگر موضوعات پر قلم آزمائی کرنے کے علاوہ سوشل میڈیا سمیت مختلف پلیٹ فارمز پر ایکٹو ہیں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

تبصرے بند ہیں.