رسولِ پاک ﷺ!

555

میلاد رحمت العالمین ﷺ مسرتوں، محبتوں، سعادتوں کی متاع گراں بہا لے کر اہل ایمان کے مضطرب جذبوں کو سیراب کرتا ہے۔ اس دن جتنی بھی خوشی منائی جائے وہ کم ہے۔ اللہ تعالیٰ نے اپنے حبیب ﷺ جیسی اعلی ترین شخصیت اس امت کو بخشی، یہ رب العلمین کا احسان عظیم ہے۔ تمام خوشیاں اسی خوشی کی مرہون منت ہیں۔ مشتاق روحیں، بے چین جذبوں کے ساتھ اس مطلع صبح ازل کی منتظر ہیں۔ ظہور قدسی کی ان مبارک ساعتوں نے تہذیب انسانی کو وقار سے نوازا۔ یہ انسانیت کی معراج ہے۔

اہل اسلام عشق و محبت کے اشکوں سے وضو کر کے حریم ِ دیدہ و دل سجاتے ہیں۔ یہ دن ٗ یہ ماہ ہر لحمہ ہر ساعت کشت ِ ایمان کے لیے بہار جاوداں کا پیام ہے۔ کائنات ہست و بود کو ان مقدس لحمات پر بجاء طور پر فخر ہے۔ِ مکہ مکرمہ میں کائنات کا وہ سورج چمکا کہ پورے جہاں کو تا ابد روشن کر گیا جو یقینا کارخانہ ِ قدرت کا سرمایہ افتخار ہے۔ جب فضائے عالم مسرتوں کے دلآویز نغموں سے گونجی تو خاکی زمین، نور کی برسات میں بھیگ کر جیسے جھوم اٹھی۔

وہ تاریخ ِ انسانی کا روشن باب جس نے وقت کا دھارا ہی بدل دیا۔ وہ سیاہ تاریخ جس کا ہر صفحہ درماندگی ٗ انسان دشمنی ٗ جاہلیت کی گواہی دے رہی تھی۔ وہ تاریخ جس کا دامن ظلم و بربریت سے تار تار تھا۔ وہ تاریخ جس میں قیصر و کسریٰ کا استبدا د لوگوں کا مقدر سمجھا جاتا تھا۔ پھر وہ گھڑی آن پہنچی کہ ”ایک ہی صف میں کھڑے ہو گئے محمود و ایاز ٗ نہ کوئی بندہ رہا نہ بندہ نواز“ جانوروں سے بدتر زیست بسر کرنے والے غلاموں کو وہ جرات و حوصلہ دیا کہ وہ اپنے آقاؤں کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر ہر جائز بات کرنے اور ان کے دست ِ جفاکش کو توڑ کر اپنا حق لینے کے قابل ہوئے۔ علم کو عرفان کو منزل تک پہنچایا۔ عمل کو صالحیت و مقصدیت کا حصار عطا کیا۔ نفرتوںٗ عداوتوں ٗ نفاق کے صحراِئے لامتناعی میں اخوت ٗ محبت ٗ پیار اور خلوص کے حیات بخش گلستاں آباد کئے۔

یوم ِمیلاد رحمت العالمین ﷺ درحقیقت پوری انسانیت کا یوم ِنجات ہے۔ جن کے آنے سے یثرب مدنیہ بنا۔ تمام جاہلیت ٗ کفر و شرک سے خلاصی ٗ جنگل کے قانون کی حکمرانی سے نجات ٗ وہ جنہیں زمانہ جاہلیت نے مایوسی ٗ غلامی ٗ ظلم کے گرداب میں دھکیل دیا تھا۔ ان کے چھٹکارے کی نوید کے ساتھ ہی معاشرے میں بے کسوں ٗ مفلسوں ٗ یتامیٰ، بیوہ ٗمفلسوں کو بھی وہی حقوق ملے جو معاشرے میں صاحب ثروت کا ہی مقدر سمجھے جاتے تھے۔

میلاد معصطفی ﷺ عظمت اور شرف ِ انسانی کی پاسباں ہے۔ جن کی شان ِ رحمت کے طفیل انسانیت کو اپنے رب کی معرفت ملی۔ جس نے بلال حبشی ؓجیسے غلاموں کو عرب کے سرداروں پر سبقت دی۔ شان ِرحمت ﷺ ظلمتِ دہر میں روشنی کا وہ منبع و مینار ہے جس سے تا حشر بھٹکنے والے قافلوں کیلئے منزل کا سراغ ہی نہیں بلکہ مکمل راہنمائی بھی موجود ہے۔ وہ جن کی رحمت تمام نسلی ٗ لسانی اور طبقاتی بتوں کو پاش پاش کر کے سب کو برابری کے حقوق عطا کرتی ہے۔

یوم ِ میلاد ﷺ اس انقلاب کی صبح نو ہے جس نے تمام انسانیت کے دامن سے درندگی ٗ جاہلیت ٗ نفاق ٗ ذات پات ٗ غرور ٗ جیسے بدنما دھبوں کو دھویا اور اسے رحمت و رافت کے سدا بہار پھولوں سے مزین کیا۔ اس انقلاب نے عرب و صحرا نوردوں کو خضرِ راہ بنا دیا جس نے نوعِ انسانی کو حقیقی آبرو بخشی۔ بے مقصدیت کی شاہراہ پر سسکتی ٗ بلکتی اور بھٹکتی انسانیت کو عرفان و آگہی کی دولت سے نواز کر خالق تک رسائی کی حقیقی منزل سے ہمکنار کیا۔ اس پاکیزہ اجالے کا قلم کیسے ادراک کرے جس نے شمس و قمر کی روشنی اور ستاروں کو ضوفشانی سے مطہر کیا۔ بلا شک و شبہ یہی وہ لحمات ہیں جن کی منتظر گردش ِشام و سحر نے ماہ و سال کی لاکھوں کروٹیں بدلی۔ بھٹکتی انسانیت ٗ انسان کے شعور کی وہ تمام ارتقائی منازل سے گزار کر بلوغت کے اس مقام پر لایا جب وہ رشد و ہدایات اور راہنمائی کے لیے کسی جامع صفاتِ ہستی کے لیے بے تاب ہو گیا اور پھر انسانی اضطراب و بے یقینی کی گرفت میں وہ نسخہ ِ کیمیا لائے کہ سسکتی انسانیت معراج تک پہنچ گی۔

اس حقیقت سے انکار ممکن ہی نہیں کہ سراپا رحمت ﷺ کی محبت کے بغیر ایمان مکمل ہی نہیں تو غلط نہ ہو گا۔ جس دل میں محمد ﷺ کی محبت نہیں ہوتی، اس دل پہ اللہ کی رحمت نہیں ہوتی۔ یہ وہ ہستی ہیں جو وجہ ِ تخلیق ِ کائنات ہیں۔ آج کا دن ہم سے ایک مطالبہ کرتا ہے کہ ہماری پہچان صرف مسلمان اور اسلام بن جائے۔ اتنا ماں بچوں کے ساتھ محبت نہیں کر سکتی جتنی ہمارے نبی ﷺ کو اپنی امت سے ہے۔ وہ دن جب آدم ؑسے لے کر عیسیٰ ؑ تک میدان ِ محشر ایک ہی صدا ہو گی نفسی نفسی تو ایک آواز منفردٗ امتی امتی ابھرے گی۔ اتنی محبت ٗہم ان ہی کو بھول گئے۔ وہی امت جو دُنیا کو محبت ٗ اخلاص ٗ مروت ٗ بھلائی کا درس دینے آئی تھی، خود بے امنی ٗ باہمی نفرتوں کا شکار ہو گئی۔ ستاروں کو نشان ِراہ دکھانے والے خود بے جہت جھنڈ بن چکےٗ فطرت کی طاقتوں کو مسخر کرنے کا عہد لے کر آنے والی قوم کا شیرازہ بکھرے ہوئے ریوڑ کی مانند ہو گیا۔

رحمت العالمین ﷺ کی قیادت باسعادت نے تمیز بندہ وآقا مٹا کر فساد ِ آدمیت کی ہر مرض کو جڑ سے اکھاڑ پھینکا۔ وہی امت فسادات کی گرداب میں پھنس گئی۔ وہ جن کی آمد نے حیاء کو ایمان کا حصہ قرار دیا ہم ان کو بھول کر اندھی تقلید میں اس قدر ڈوب گئے کہ اپنی ہی تہذیب ٗ پہچان مٹا دی۔ ایثار ٗ قربانی ٗ اخوت ٗ باہمی پیار و محبت اس امت کا طرہ ِ امتیاز ہے۔ لیکن ہم آج عدم ِ برداشت ٗ خود غرضی ٗ نفرت جیسی موذی بیماریوں میں گِھر چکے اور پھر ہمیں فخر بھی ہے۔

رحمت العالمین ﷺ نے خود طائف میں پتھر کھائے ٗ کوڑا کرکٹ پھکینے والوں سے بھی در گزر فرمایا۔ یہ امت کو پیغام دیا کہ کامیابی درگزر میں ہے ایک دوسرے کے دست و گریبان ہونے میں تباہی کے سوائے کچھ بھی نہیں۔ آج کے دن اگر ہم یہ عہد ہی کر لیں کہ ہم ایک رول ماڈل (مثالی) امت ہیں ہم اپنے نبی ﷺ کو رہبر مانیں گے۔ جدھر سورج بھی اندھا ہو جاتا ہے ان کو اپنا راہبر و آقا تسلیم نہیں کرتے ہوئے یہ معاشرے میں عدم ِ مساوات ٗ قتل و غارت ٗ ہرس و ہوس ٗ کبر و نخوت ٗ خونخواری ٗظلم و ستم و غار و تگری کا بت نہیں بنیں گے۔ بلکہ عظیم و جلیل نبی ﷺ سے استفادہ کریں گے۔ قوت عشق سے ہر پست کو بالا کر دے۔ دہر میں اسم ِ محمد سے اجالا کر دے۔ تاجدار ِ کائنات ﷺسے محبت کی بدولت ہم ایک امت بن جائیں متحد ہو جائیں۔ خلفشار و سازشوں ٗ نفاق ٗ انا ٗ نفرت سے باہر نکل کر ذات ٗ قوم ٗ قبیلہ ٗ سرحدی حدود سے بالا تر ہو کر ایک نبی ﷺ کے امتی ہو جائیں۔ اور ان ﷺ کی آمد کے جشن میں اپنی ممکنہ توانیاں صرف کردیں۔

کی محمد سے وفاء تُو نے تو ہم تیرے ہیں.یہ جہاں چیز ہے کیا،لوح و قلم تیرے ہیں۔ جن کا ذکر اللہ تعالیٰ نے بلند فرمایا ِ ٗ خاکے، توہین آمیز مواد والے خود ہی ذلیل و خوار ہوتے ہیں۔ ہمیں اپنے عمل سے پیارے نبی ﷺ سے محبت کا ثبوت دینا وقت کی ضرورت ہے۔

نوٹ: ادارے کا قلمکار کے خیالات اور پیش کردہ مندرجات سے متفق ہونا ضروری نہیں

عابد ضمیر پیشہ ور صحافی ہیں، کرنٹ افیئرز سمیت دیگر موضوعات پر قلم آزمائی کرنے کے علاوہ سوشل میڈیا سمیت مختلف پلیٹ فارمز پر ایکٹو ہیں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

تبصرے بند ہیں.