براؤزنگ زمرہ

لوگ کہانی

مرثیہ اور میر انیس

ماہنامہ "روحانی دنیا لکھنو "میں منقول ہے کہ ایک بار میر انیس مجلس میں مرثیہ پڑھ رہے تھے کہ پاس سے راہ گیر گزراور دریافت کیا کہ کیا ہورہا ہے؟ کسی نے بتایا کہ انیس مرثیہ پڑھ رہے ہیں اور محبان اہلبیت ماتم کر رہے ہیں ۔اس پر وہ شخص چلایا سبحان…

!پاک بھارت دوستی کےخواہاں۔ کلدیپ نئیرکو جتنا میں جانتا ہوں

ہندوستان کے نامور صحافی اور دانشور کلدیپ نئیر ۹۵ سال کی عمر میں انتقال کر گئے ۔ ان سے میری پہلی ملاقات دسمبر ۱۹۵۹ میں دلی میں حکومت ہند کے پریس انفارمیشن بیورومیں ہوئی تھی جب وہ لال بہادر شاستری کے انفارمیشن افسر تھے ۔ انہیں جب معلوم ہوا کہ…

!اٹل بہاری واجپائی ۔غلط لوگوں میں گھراک صحیح شخص

ہندوستان کے سابق وزیر اعظم اٹل بہاری واجپائی کے اس دنیا سے اٹھ جانے کی خبر سن کر مجھے 1959کے وہ دن یاد آگئے جب مجھے ان کو قریب سے دیکھنے کا موقع ملاتھا ۔ میں دلی میں پارلیمنٹ سے ایک پتھر کی مار کے فاصلے پر رائے سینا ہوسٹل میں رہتا تھا۔…

عصمت چغتائی: روایات سے باغی مصنفہ

اردو ادب میں عصمت چغتائی کا نام کسی تعارف کا محتاج نہیں۔ بیسویں صدی کے اوائل میں انہوں نے جن نقاط کو موضوع بحث بنایا وہ آج کی جدت پسند آزادی نسواں تحریک کا خاصا ہیں۔ عصمت چغتائی نے مارکسزم کے پس منظر میں رہتے ہوئے سماجی طبقات کے مابین…

صادقِ آلِ اطہار

وہ ستارہ نہیں بلکہ وہ سورج ہے۔ جب تم سمجھو گے کہ وہ غروب ہو رہا ہے، عین اُسی وقت کسی اور اُفق پر طلوع ہو رہا ہوگا۔ دنیا کی ساری روشنیاں اسی کے عِلم سے ہیں اور اس نے اپنے علم سے دنیا کو روشن کر دیا ہے۔ وہ روشنی اور زندگی کا استعارہ ہے۔ اس نے…

پاکستان کا انقلابی جاگیردار

یہ 1953 کے آخری دنو ں کی بات ہے۔ رات گئے امروز کراچی کے دفتر میں ٹیلی پرنٹر کی گڑگڑاہٹ میں ایڈیٹر قاضی ابرار اداریہ لکھ رہے تھے۔ نیوز ایڈیٹر ہارون سعد ٹیلی پرنٹر کی خبریں چھانٹ رہے تھے۔ ان کے سامنے ایک پتلی سے میز پر حیدر علی، مصعب اور میں…

مشتاق احمد یوسفی ایک عہد جو تمام ہوا

مشتاق احمد یوسفی کا تعلق بھارت کے شمال مغرب میں واقع ریاست راجستھان سے ہے۔ ان کا آبائی شہر جے پور، ضلع ٹونک تھا۔ راجستھان صنعت، علم و ادب اور فنون لطیفہ کے لحاظ سے بھارت کا زرخیز علاقہ ہے اور شاید یہ اس علاقے کی زرخیزی ہی ہے جس نے مشتاق…

وہ آدمی ہے مگر دیکھنے کی تاب نہیں

تحریر کے لیے میں نے جو عنوان چنا ہے، یقینا ً اس کے ساتھ میرا نام لکھنا مناسب نہیں، لیکن جس شخصیت نے یہ جملہ لکھا قبلہ پر خوب جچتا ہے کہ ان کے قلم کے خواص اور سوچ کے دائرے تک پہنچنا خاکسار کے لیے سورج کو چراغ دکھلانے کے مترادف ہے۔ پر کیا…

جانے والے تو بہت یاد آئے گا

؎ کاش دیکھوکبھی ٹوٹے ہوئے آئینوں کو دل شکستہ ہوتو پھراپنا پرایا کیا ہے قائداعظم یونیورسٹی میں واقع طبیعیات کے جس مرکز کا نام سنہ 2016 میں پاکستان کے پہلے نوبل انعام یافتہ سائنسدان ڈاکٹر عبدالسلام سے منسوب کرنے کی منظوری دی گئی تھی اب اس کا…

برصغیر کی تاریخ میں ایک کلیدی کردار، علامہ اقبال

تو شاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں سیالکوٹ کی گلیوں میں واقع اقبال منزل میں 9 نومبر 1877ء کو ایک ایسی عظیم شخصیت نے اپنی آنکھ کھولی جس کے ایک خواب نے ہندوستان کی تقدیر بدل دی اور سونے کی چڑیا کہلوانے والی سرزمین…