تھینک یو زینب

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ خُشک سالی چل رہی تھی۔ ذہن بانجھ ہو چکے تھے۔ زبانیں گنگ ہوئی پڑی تھیں۔ قلمکار سُوکھا قلم گھسیٹ رہے تھے۔ شاعروں کے تَخیل پر کَائی جم چکی تھی۔ موسیقاروں کی دُھنیں ہوا میں اِرتعاش پیدا کیے بغیر گزر جاتیں۔ سیاستدان، سماجی…