جمہوریت کے جے کانت شکرے

پاناما کا فیصلہ آنے کے بعد سابق وزیرِ اعظم نواز شریف کے گلے شکووں کی ایک ٹرین چل نکلی ہے۔ ان بے شمار گلے شکووں کی بنیاد اس دلیل پر ہے کہ عوام کی عدالت کسی بھی دنیاوی عدالت سے بڑی عدالت ہے اور یہ عدالت اپنا فیصلہ ووٹ کے ذریعے سناتی ہے۔ لہذا…

میاں صاحب، داغ اتنے بھی اچھے نہیں ہوتے

یہ 27 نومبر 1997 کی بات ہے جب چیف جسٹس سجاد علی شاہ کی سربراہی میں بنچ دوسری بار وزیر اعظم بنے نواز شریف کے خلاف تو ہین عدالت کیس کی سماعت کر رہا تھا اور ڈیفینس لائر ایس ایم ظفر دلائل دے رہے تھے۔ یکا یک غل برپا ہوا اور سینکڑوں لیگی ورکرز…