تاریخ رقم کردینے والا پاکستانی فراڈیا

انتہائی مفلس اور غریب گھرانے سے تعلق رکھنے کے باوجود وہ کسی نہ کسی طرح بی ایس سی اور بی ایڈ کرکے وزیرآباد کےقریب نظام آباد کے گورنمنٹ ہائی سکول میں سائنس کا استاد بھرتی ہو گیا. 2004ء میں اس نے نوکری چھوڑ دی اور دوبئی چلا گیا.وہ چھ ماہ…

لوح قبر کی کہانی

فیس بک پر سکرولنگ کر تے میری نظر ایک ایسی تصویر پر پڑی جو کسی قبرستا ن کی تھی اوراس میں ایک قبر کے کتبے کو فو کس کیا گیا تھا جیسے ہی میں نے اس تصویر پر ماؤس کے ایرو کو کلک کیا تو یہ تصویر بڑی ہوکر میری 21 انچ کی سکرین پر پھیل گئی۔ یہ کتبہ…

زندگی کی ڈور کو کاٹتی پتنگ

حکومت پنجاب نے ۱۲ سال کے بعد پنجاب کے روایتی تہوار بسنت کو منانے کا عندیہ دیا ہے اور صوبائی وزیر قانون، سیکریٹری پنجاب اور لاہور کی ضلعی انتظامیہ کے افسران پر مشتمل ایک کمیٹی تشکیل دی ہے جو کہ اس بات کا جائزہ لے گی کہ اس تہوار کے موقع پر…

ملکہ کوہسار یا سفید پوش ڈاکووں کا مسکن

ملکہ کوہسار مری قیام پاکستان سے پہلے سے ہی ایک تفریحی مقام طور پر جانا جاتا تھا۔ اس وقت کے انگریزحکمران میدانی علاقوں کی گرمی سے پریشان ہو کر کچھ دن سکون سے گزارنے یہاں آ جاتے تھے۔ پورے برصغیر میں چند ہی ایسے مقام تھے جو کہ پہنچ میں بھی…

زوال پزیر معاشرے کے ہاتھوں ایک گلوکارہ کی موت

سندھ کےعلاقہ لاڑکانہ میں گذشتہ دنوں ایک مقامی سنگر سیمنہ سندھو کو شادی کی خوشی میں منعقد موسیقی کی تقریب میں نشے میں مدہوش ایک تماش بین نے گولی مارکر ہلاک کردیا۔ وہ ضد کر رہا تھا کہ گلوکارہ کھڑے ہوکر گانا سنائے۔ خبر کے مطابق گلوکارہ آٹھ…

اپنی بچیوں کو زندہ درگور کر دیں

بچپن میں ہمارے اردو کے استاد ماسٹر فرمان علی بتایا کرتے تھے کہ زمانہ جہالت میں جزیرہ نما عرب میں کسی کے گھر لڑکی پیدا ہوتی تو وہ اسے زندہ درگور کر دیا کرتا تھا۔ ہم اکثر پوچھا کرتے تھے کہ سر وہ ایسا کیوں کرتے تھے تو وہ بتاتے تھے کہ عرب کے…

 سانحہ قصور کی مقتول بچیوں کو شھید کہا جاسکتا ہے؟

زینب قتل کیس نے معاشرے کو ہلا کر رکھ دیا اور بے شمار سوالات کو جنم دیا ہے۔ ایسے ہی کچھ سوالات کے جوابات ہم  اس تحریر میں تلاش کرنے کی کوشش کریں گے۔ اس سارے واقعے میں ایک سوال جو کہ بہت بار اٹھایا گیا وہ یہ ہے کہ زینب قتل کیس میں ایسی کون سی…

معاشرے کے مردہ ڈھیر پر زندہ زینب

ہم زندہ قوم ہیں۔ ہم پائندہ قوم ہیں۔ ضیاء الحق کے دور میں یہ ترانہ سنتے سنتے ہم جوان ہوئے۔ لیکن اس دور میں ہم نے جتنے بھی ترانے بنائے ان کا ہم پر الٹ اثر ہوتا گیا اور ہم مرُدوں سے بھی بد تر ہوگئے۔ ہمارا ضمیر دور کسی قبرستان میں جا سویا اور…

آرمی پبلک سکول کے شہداء کو انصاف کب ملے گا؟

سولہ دسمبر 2016ء کا دن پاکستان کی تاریخ کا سیاہ ترین دن ہے۔ اُس دن تحریکِ طالبان پاکستان کے چھ مسلح دھشت گردوں نے پشاور کے آرمی پبلک سکول کے احاطہ میں داخل ہوکر ایک سو اکتالیس افراد کو بےدردی سے قتل کر دیا تھا۔ ان قتل ہونے والے طالبعلموں…

وادی مرگ کے مسافر

پنجاب کے مرکزی اضلاع  سیالکوٹ، گجرات، گوجرانولہ اور جہلم کے نوجوانوں میں آج کل پنجابی کا ایک جملہ "بیچو مکان تے چلو یونان" (مکان فروخت کرو اور یونان چلو) ایک رائج الوقت محاورے کی شکل اختیار کرتا جارہا ہے۔ اس جملہ کے اس قدر زبان زد عام ہونے…